کنٹریکٹ پر تعینات ڈاکٹروں کا اجلاس، وزیر اعلی کی وعدہ خلافی پر اظہار افسوس،وعدہ وفا کرنے کا مطالبہ۔

چلاس:(شفیع اللہ قریشی)وزیراعلیٰ گلگت بلتستان کا وعدہ وفا نہ کر سکا۔دو سال گزرنے کے باوجود بھی ڈکٹروں کو پرمنٹ نہیں کیا گیا ۔ڈاکٹروں کے پروموشن زیر التوا کا شکار اور حقوق اور مرعات سے محروم ہے۔مسائل حل کرنے لئے صوبائی حکومت سنجیدہ نہیں۔پی ایم اے دیامر جی بی۔ ڈی ایچ کیو ہسپتال چلاس میں پاکستان میڈیکل ایسو ی ایشن دیامر جی بی کا ہنگامی اجلاس ،جس میں تمام ڈکٹروں نے شرکت کی۔اجلاس پی ایم اے دیامر جی بی جنرل سیکریٹری ڈاکٹر صلاح الدین کی زیر قیادت میں ہوئی۔جس کے دوران ڈکٹروں کو درپیش مسائل پر زیر غور کیا گیا۔ڈکٹروں کی اجلاس میں کہا گیا کہ وعدے کے مطابق کنٹریکٹ پر تعینات تما م ڈاکٹروں کووعدے کے مطابق فوری طور پر ریگولر کیا جائے جو وزیر اعلیٰ گلگت بلستان حافظ حٖیظ الرحمان نے دو سال قبل اعلان کیا تھا۔تاہم ابھی تک وعدے پر عمل درآمد نہیں ہو سکاہے۔اجلاس میں کہا گیا کہ ملک کے چاروں صوبوں اور وفاق سمیت آزاد کشمیر میں کنٹریکٹ پر کام کرنے والے تمام ڈکٹرز کو 2016میں ہی مستقل کیا گیا ہے۔جبکہ ہماری مستقلی کی فائل چیف منسٹر سکریٹ اور چیف سیکٹریٹری آفس کے درمیان فٹ بال بنی ہوئی ہے اس صورتحال نے ڈکٹروں کو شدید زہنی اذیت سے دو چار کر کے رکھ دیا ہے۔ماضی میں ڈکٹروں کی کمی دور دراز پہاڑی علاقے ہونے اور مخصوص حلات کے باعث دوسرے علاقوں سے کوئی ڈاکٹر گلگت بلتستان آنے کے لئے تیا ر نہیں ہوتا ہے جس کی وجہ سے یہاں کے عوام معمولی بیماری کے علاج کے لئے باری اخراجات برداشت کر کے ملک کی دیگر صوبوں کی طرف روخ کر نے پر مجبور تھے۔لیکن وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ گلگت بلتستان کے ہی سلانہ درجنوں ڈکٹرز مختلف شعبوں میں سپیسلائزیش کر کے فارخ التحصل ہوتے رہے اور یہ سلسلہ جا ری و ساری ہے۔اجلاس میں کہا گیا کہ کنڑیکٹ پر خدمات دینے والے ڈکٹروں کو فیڈرل کمیشن کے گھن چکر میں پھنسانے کے بجائے انہیں فوری طور پر پرمنٹ کرنے کی احکامات جاری کئے جائے۔کیوں کہ سینکڑوں غیر مستقل ڈکٹرز جی بی کے مختلف علاقوں میں گزشتہ پانج پانج سالوں سے خدمات سرانجام دے رہے ہیں ،ان ڈکڑوںمیں سے بیشتر کے عمریں بھی ملازمت کے لئے درکار عمر کی حد سے تجاوز کر گئی ہے اب اس موڑ پر انہیں ماستقل کرنے کے بجائیب کسی اور طرف بانکنا انصاف کے تقاضوں کے بر خلاف ہیں۔ اجلاس کے دوران کہا کہ ڈکٹروں کی پروموشن زیر التوا کا شکار ہے تاہم ابھی تک اس پر بھی عمل درآمد نہیں کیا گیا۔اب مذید صبر کا امتحان نہ لیا جائے ۔سفارشی اور سیاسی کلچر کو ختم کرنا ہوگا۔پاکستان میڈیکل ایسوسی ایش اجلاس میں کہا گیا کہ گلگت بلتستان کے ڈکڑوں کو ملک کے دیگر صوبوںکی طرح حقوق اور تمام مرعات دے دی جائے۔اجلاس میں کہا گیا کہ جلد از جلد ڈکٹروں کے تمام درپش مسائل کو حل کرنے لئے عملی طور پر غور کیا جائے ۔ورنہ احتجاج کے لئے سڑکوں پر نکل آجائیں گے۔

About TNN-GB

اپنی رائے کا اظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

*

apental calc