سنئیر قانون دان احسان علی ایڈووکیٹ کی گرفتاری کے خلاف وکلاء برادری کا چیف کورٹ گلگت کے سامنے بھر پور احتجاجی مظاہرہ۔

گلگت(خبرنگارخصوصی)سینئر قانون دان و سپریم اپیلٹ کورٹ بار کے صدر احسان علی ایڈووکیٹ کی گرفتاری کے خلاف وکلاء برادری کا چیف کورٹ گلگت کے سامنے بھر پور احتجاجی مظاہرہ۔جمعہ کے روز ینگ لائرز فارم گلگت بلتستان ،ڈسٹرکٹ بار گلگت ،چیف کورٹ بار اور سپریم اپیلٹ کورٹ بار کے وکلاء نے چیف کورٹ گلگت بلتستان کے سامنے سینئر قانون دان احسان علی ایڈووکیٹ کے خلاف مبینہ توہین مذہب کے الزام میں کاٹا گیا FIRاور اس کے بعد گرفتاری کے خلاف بھرپور احتجاجی مظاہرہ کیا گیا ۔احتجاجی مظاہرے میں وکلاء نے احسان علی ایڈووکیٹ کے حق میں پلے کارڈ ز اور بینرز اٹھائے رکھے ہوئے تھی جس پر احسان علی ایڈووکیٹ کو رہا کرو کے مطالبات درج تھے ۔احتجاج سے قبل وکلاء نے بار سے چیف کورٹ تک احتجاجی ریلی نکالی جس میں پولیس ،انتظامیہ اور دیگر متعلقہ اداروں کے خلاف شدید نار بازی بھی کی گئی اوراحسان ایڈووکیٹ کے گرفتاری کا اصل ذمہ دار پولیس کو ٹھرایا گیا ۔احتجاج میں کثیر تعداد میں وکلاء برادری کے ساتھ ساتھ سول سوسائٹی کے لوگوں نے بھی کثیر تعداد میں شرکت ۔اس موقع پر احتجاجی مظاہرین سے خطاب کرتے ہوئے سینئر قانون دان شہباز ایڈووکیٹ،ٖسٹرکٹ بار کے صدر سلیم الدین ،ینگ لائرز فورم کے صدر ایڈووکیٹ راشد عمر ودیگر نے کہا کہ احسان علی ایڈووکیٹ کو گرفتار وکلاء برادری میں اتفاق نہ ہونے کی وجہ سے ہوئی ہے ورنہ وکلاء برادری میں اتفاق ہوتا تو آج کسی کی مجال نہیں تھی کہ وہ احسان ایڈووکیٹ کو گرفتار کرتے ۔ احسان ایڈووکیٹ کی گرفتاری کے خلاف دنیا کے ساتھ ملکوں اور پاکستان کے ساتھ شہروں میں احتجاج ہوا ہے لیکن گلگت بلتستان میں خاموشی اور احتجاج نہ ہونا اس خطے میں لڑاو اور حکومت کروکی سازش ہورہی ہے اور اس سازش کو ہم وکلاء برادری ایک پلیٹ فارم پر جمع ہو کر اس گلگت بلتستان کو امن کا گہوارا بنانا ہے ۔سینئر وکلاء نے کہا کہ احسان صاحب نے کبھی ایسی حرکت نہیں کہ ہے اگر کہ بھی تھی تو اس پر قائد ملت جعفریہ سید آغاراحت سے معذرت کے بعد یہ سلسلہ ختم ہوچکا تھا لیکن حکومت اور کچھ لوگ اس کو پری پلان کے تحت حق کی آواز کو دبانے کی کوشش کررہے ہیں۔شہباز ایڈووکیٹ نے کہا کہ جب بھی کوئی شخص گلگت بلتستان کی حقوق کی بات کرے گا اس کے ساتھ یہیں ہونا ہے ،ہم احسان ایڈووکیٹ گرفتاری پر تمام وکلاء برادری مل کرقانونی جنگ لڑیں گے ۔وکلاء نے کہا کہ رات کے 2بجے احسان ایڈووکیٹ کو گرفتار کرکے اس کے گھر کی چادر اور چاردیواری کے تقدس کو پامال کیا گیا ہے جس میں ہم جتنی بھی مذمت کریں بہت کم ہے ۔انہوں نے کہا ریاستی اداروں ،صوبائی حکومت اور دیگر اداروں سے مطالبہ کرتے ہوئے احسان ایڈووکیٹ کوفوری طور پر رہا کیا جائے بہ صورت دیگر گلگت بلتستان کے تمام اضلاع سمیت پورے پاکستان کورٹ بارزاور آزاد کشمیر کے بارز کو احتجاجی کی کل دی جائے گی جس کے سامنے حکومت گھٹنے ٹیکنے پر مجبور ہوجائے گی ۔واضح رہے کہ گزشتہ روز احسان ایڈووکیٹ کی گرفتاری کے خلاف غذر اور ہنزہ نگر وکلاء برادری نے عدالتوں کا بائیکاٹ کیا گیا تھا ۔سینئر قانون دان احسان ایڈووکیٹ کی گرفتاری کے خلاف آج گلگت بار ایسوسی ایشن کی جانب سے اہم اجلاس منعقدہ کرنے او ر اس میں تمام وکلاء کو شرکت کرنے کی اطلاع دی گئی ہے جس کے بعد اگلے لائحہ عمل کا اعلان کیا جائے گا۔

About TNN-GB

اپنی رائے کا اظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

*

apental calc