ایس سی او کی طرف سے 4G سروس کی فراہمی میں ناکامی اور دوسری کمپنیز کو لائسنس حاصل کرنے سے روکنے پر گلگت بلتستان کی عوام میں شدید غم و غصہ۔

سکردو (ڈسٹرک رپورٹر) گلگت بلتستان میں ایس سی او کی طرف سے 4 جی چلانے میں ناکامی اور مبینہ طور پر رکاوٹ یں کھڑی کر کے دوسری کمپنیز کو 4 جی لائسنس حاصل کرنے سے روکنے پر گلگت بلتستان کی عوام میں شدید غم و غصہ ، سکردو مین نوجوانوں نے 10 فروری کو ایس سی اور آفس کے سامنے اپنی اپنی سمیں جلانے کا اعلان کر دیا ، ذرائع کے مطابق گلگت بلستان کی عوام ، پڑھے لکھے اور ہنر مند افراد اس بات پہ بھی نالاں ہیں کہ ایس سی او نہ صرف علاقے کی ہزاروں نوکریوں پر قابض ہے بلکہ اس جدیددور میں بھی جی بی کو ٹیلی مواصلات کی جدید سہولتوں سے محروم رکھنے کی ذمہ دار بھی ہے، احتجاج کرنے والوں کا کہنا ہے کہ ایس سی او پچھلے تین سالوں سے گلگت بلتستان میں 4 جی لائسنس کی نیلامی میں رکاوٹ ڈال رہا ہے ، یہ خود تو اس قابل نہیں کہ عوام کو 4 جی کی سہولت دیں بلکہ دوسری کمپنیز کو لائسنس کے اجراء مین بھی رکاوٹ ڈال رہا ہے ۔ عوامی حلقوں کی طرف سے یہ بھی کہا جا رہا ہے کہ ایس سی او نے قبل از وقت 4 جی سمیں 1000 سے 1500 میں فروخت کیں مگر اب وہ سمیں نہین چل رہی ہیں ۔ ایس سی او نے اب ایک ڈرامہ شروع کیا ہوا ہے جس کے تحت گلگت بلتستان میں ایکٹو 4 جی سموں پر 4 جی سہولت بلاک کر کے کشمیر سے سمم سپلائی کی جا رہی ہے جو ایک بار پھر 1000 سے 1500 میں مل رہی ہیں ، اس طرح 4 جی کی آر میں ایس سی او اب تک جی بی والوں سے کڑوڑوں راپیئے ہڑپ کر چکی ہے ، لیکن تاحال 4 جی کی سہولت پوری طرح دستاب نہیں ہے ۔ احتاجان کی کال دینے والوں کا کہنا ہے کہ ایس سی او نے عوام کو بے وقوف سمجھا ہوا ہے جس کے خلاد شدید رد عمل آئے گا ، دوسری طرف جی بی کے سوشل ایکٹوسٹتس کی طرف سے سوشل میڈیا پر ایک کمپئین لانچ کی ہے جسے عوام کی طرف سے خوب پذیرائی مل رہی ہے.

About TNN-GB

اپنی رائے کا اظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

*

apental calc