اسلام آباد میں ٹیکس کے حوالے سے پارلیمانی کمیٹی ،جی بی کونسل ،ایکشن کمیٹی اور انجمن تاجران کا مشاورتی اجلاس ختم

اسلام آباد(بیورو رپورٹ) پارلیمانی کمیٹی برائے ٹیکس ،گلگت بلتستان کونسل ،ایکشن کمیٹی اور،انجمن تاجران کا اسلام آباد میں ٹیکس کے حوالے سے اجلاس تین دن تک جاری رہا.باہمی مشاورت کے بعد تمام فریقین کا چار نکاتی ایجنڈے پر اتفاق پایا۔ آخری اجلاس کی صدارت سینئر وزیر اکبر تابان نے کی جس میں پارلیمانی کمیٹی کے ارکان وزیر قانون اورنگزیب ایڈوکیٹ ،وزیر تعمیرات ڈاکٹر اقبال ،ممبر اسمبلی عمران ندیم ،ممبر اسمبلی کاچو امتیاز حیدر ،گلگت بلتستان کونسل کے اراکین چیر مین سٹیڈنگ کمیٹی اشرف صدا ،چیرمین پبلک اکاونٹس کمیٹی سید افضل ،ممبر ارمان شاہ، ممبر سلطان علی خان وزیر اخلاق ،آغا سید عباس رضوی جبکہ عوامی ایکشن کمیٹی کے چیر میں سلطان رئیس ،وائس چیر مین فدا حسین ،انجمن تاجران کے رہنما مسعو دالرحمن غلام حسین اطہر ،آغا تقی سبزواری،اشرف حسین شریک ہوئے ،اجلاس میں طے پایا کہ گلگت بلتستان پارلیمانی کمیٹی و ایکشن کمیٹی ،انجمن تاجران کے درمیان جو معاہدہ گلگت میں طے پایا گیا تھا اس کے بعد چیر مین سٹینڈنگ کمیٹی ملک ابرار کی سربراہی میں کمیٹی تشکیل دی گئی اس کمیٹی نے گلگت بلتستان اسمبلی کی پارلیمانی  کمیٹی کی سفارشات کو من و عن تسلیم کیا تین روزہ مشاورتی اجلاس میں مندرجذیل فیصلے ہوئے۔
1۔منرل پالیسی کے حوالے سے گفت و شنید کے دوران پبلک اکاونٹس کمیٹی کے چیر مین سید افضل نے اجلاس کو بتایا کہ منرل پالیسی میں ترامیم کے بعد نوٹیفیکشن جاری ہو چکا ہے طے پایا کہ نو ٹیفیکشن کی نقل گلگت بلتستان حکومت اور اسمبلی سکیر ٹریٹ کو فی الفور ارسال کی جائے ،منرل پالیسی کاسبجیکٹ جو کہ گور ننس آرڈر کے تحت کونسل کے پاس ہے اس کو گلگت بلتستان اسمبلی منتقل کیا جائے گا
.2 ٹیکسسز کے حوالے سے مجوزہ قانون سازی جو کہ تحت گورننس آرڈر جی بی کونسل کے پاس ہے کونسل اراکین مجوزہ قانون سازی کا بل تیار کر کے گلگت بلتستان اسمبلی کو ارسال کریں تا کہ تحت معاہدہ گلگت بلتستان اسمبلی میں تٖفصیل سے غور خوص کے بعد گلگت بلتستان اسمبلی مجوزہ قانون سازی کے لئے بل میں اپنی رائے شامل کر کے سفارشات کونسل کو ارسال کرے گی۔
,3اس امر پر بھی شدت سے زور دیا جاتا ہے کہ تمام بالواسطہ گلگت بلتستان سے تمام قسم کے ٹیکس جو کہ وصول کئے جاتے ہیں کو مرکزی حکومت کے ساتھ معاملات طے کر کے گلگت بلتستان حکومت کو واپس کئے جائیں اس کا طریقہ کار بھی جلد وضح کیا جائے
4 جب تک مندرجہ بالا سفارشات پر بذریعہ قانون سازی عمل نہیں ہوتا ہے تب تک تمام ٹیکسسز جو کہ وزیر اعظم پاکستان کے پاس ہے اور جسے چیئرمیں گلگت بلتستان کونسل نے معطل کئے ہیں وہ معطل رہیں گے ۔

About admin

اپنی رائے کا اظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

*

apental calc