گلگت بلتستان 2017 کے آئینے میں، خصوصی رپورٹ

سکردو(نامہ نگار) گلگت بلتستان میں 2017 میں کیا گزرا اور کیا کیا ہوا؟ تحریر نیوز کے مطابق سال 2017 میں دل کی بیماری نے بڑے بڑے سیاسی و سرکاری افسران کی جان لی ان میں آغا رضی الدین محمد نذیر مرزا حسین جج نظیم شہزاد ضیا اور دہشت گردوں نے کے پی کے کا ایڈیشنل ائی جی اشرف نور کو شہید کیا گیا اور قومی ہیرو مشہور کوہ پیما حسن سدپارہ اور بابائے صحافت سید مہدی شاہ بلتستان کے سماجی شخص حاجی عباس سدپارہ اور چھوربٹ کے انجینئر شیر علی بھی اس دنیا کو چھوڑ دیا اور موسمی اعتبار سے فروری کے مہینے میں برف باری نے 42 سالہ ریکارڈ توڑ دیا اور اس سال گلگت بلتستان کی وادیاں دیکھنے انے والے سیاحوں کی تعداد پندرہ لاکھ تک رہا جو گلگت بلتستان کی تاریخ کا سب سے زیادہ ہے تعلیمی شعبے کی بات کروں تو اس سال این ٹی ایس کے تحت اساتذہ کی خالی اسامیوں پر بھرتی پہلی مرتبہ میرٹ پر ہوا ہے اس سال مئی کے مہینے میں واپڈا پاور ون ٹو کا ٹربائن خراب ہونے کی وجہ سے پابچ دن سکردو میں بجلی کی مکمل بند اور سکردو شہر میں اندھیرا چھایا رہا سکردو میں اگست کے مہینے میں سرفرانگاہ جیب ریلی منعقد ہوا اور اور سدپارہ کے مقام سیلاب کے زد میں اکر پانچ افراد جان بحق ہوا اور ان کا لاش اب تک نہیں مل سکا ہے اس سال اسماعیلی فرقے کے امام پرنس کریم آغا خان نے اپنا دیدار بھی کرایا اور ٹیکس ایشو پر بلتستان کے عوام نے گلگت کی طرف تاریخی لانگ مارچ بھی کیا گیا تھا۔

About TNN-GB

اپنی رائے کا اظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

*

apental calc