ٹیکس کے خلاف علمائے دیامر کا مشترکہ فتوی جاری کردیا۔

چلاس(بیوروچیف )ٹیکس معاملے میں عوامی ایکشن کمیٹی کے مضبوط حصہ ہیں ٹیکس غیر قانونی غیراخلاقی اور غیرشرعی بھی جو کسی بھی صورت قبول نہیں سختی سے مسترد کرتے ہیں.داریل.تانگیر.تھور.چلاس.تھک کے علماء کا مشترکہ بیان۔ تفصیلات کے مطابقیں نائب خطیب مرکزی جامع مسجد مولانا عبدالمحیط چلاس،جنرل سیکریٹری اشاعت التوحید والسنہ مولانا عبدالطیف تھور،معروف عالم دین ،مفتی ولی الرحمان.صدر نیو اڈہ چلاس ،حاجی احسان اللہ راہنماء جمعیت علماء اسلام،امیر اشاعت التوحید۔مولانا غلام سرور،تانگیر،مولانا.محمد انورنائب امیر اشاعت التوحید داریل۔مولانا مطیع الحق تھک.مولانا عبدالمجید.خطیب ابراہیمی مسجد..امیر جمعیت علماء اسلام دیامر مولانا محمد شریف.و دیگر علماء عمائدین نے ہمارےنمائندے سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ گلگت بلتستان اقوام متحدہ کے قرارداد میں متنازعہ خطہ ہے اس خطے پر ٹیکسیز کا جبری نفاذ بھی غیرآئینی ہے۔حکومت حقوق دیکر ٹیکس لگائے دینے کیلئے تیار ہیں ،.پہلے حقوق بعد میں ٹیکس۔ فی الوقت گلگت بلتستان اندرونی انتشار اور بیرونی کھلی جارحیت کا شکار ہے .افراتفری عام ہے .تھانے دار سے لیکر پٹواری تک چور اور ڈاکوؤں کا جم غفیر عوام کی جمع پونجی سود .مہنگائی.اور غیر قانونی جبری ٹیکس کے زریعے لوٹ کھسوٹ میں مصروف ہیں .غریب کو غربت کے قبر میں گاڑ دیا گیا ہے امیر لوگ تاروں پر بستر دراز کئے دکھائے دیتے ہیں .یہ ناانصاف معاشرہ یہ ظلم پر مبنی رویے .یہ غیر قانونی ٹیکس لگانے والی حکومت عوام کے منہ سے نوالہ کیوں چھیننا چاہتی ہے ..دیامر علماء عمائدین نے مزید کہا کہ جب تک پہلے حقوق دئے بناء غیر قانونی ٹیکس کا خاتمہ نہیں کیا جائیگا تب تک ہم چین سے نہیں بیٹھیں گے۔

About admin

اپنی رائے کا اظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

*

apental calc