گلگت بلتستان میں انکم ٹیکس ایکٹ 2012 کو کسی بھی صورت ختم ہوجانا چاہئے۔ اپوزیشن لیڈر قانون ساز اسمبلی،دیگر

اسلام آباد( بیورو رپورٹ) غیرقانونی ٹیکسز کے خلاف اپوزیشن جماعتوں اور گلگت بلتستان یوتھ کا اسلام پریس کلب پراحتجاج۔ میڈیا سے بات کرتے ہوئے گلگت بلتستان قانون ساز اسمبلی میں اپوزیشن لیڈر کپٹن ریٹائرڈ محمد شفیع خان نے کہا ہے کہ ٹیکس ایڈاپٹشن 2012کی معطلی تک ہمارا احتجاج جاری رہے گا اور ہم اس معاملے میں انجمن تاجران اور عوامی ایکشن کمیٹی کے ساتھ کھڑے ہیں۔ اُنکا کہنا تھا کہ گلگت بلتستان ایک متنازعہ خطہ ہے اور اقوام متحدہ کے قراداوں کی روشنی میں پاکستان کے زیر انتظام ہیں لہذا مسلہ کشمیر کی حل تک اس خطے کی دیکھ بھال مملکت پاکستان کی ذمہ داری ہے لیکن ہمارے حکمرانوں نے اپنی ذمہ داریاں نبھانے کے بجائے ہماری نئی نسل کو احتجاج کرنے پر مجبور کررہا ہے جسکا پاکستان متحمل نہیں۔ رہنما تحریک انصاف گلگت بلتستان آمنہ انصاری نے اس حوالے سے میڈیا کو بتایا کہ گلگت بلتستان ایک متنازعہ خطہ ہے اور مسلہ کشمیر کی حل تک یہاں کسی بھی قسم کے ٹیکس کا نفاذ غیرقانونی اور یہاں کے غریب عوام پر ظلم ہے جس کے خلاف ہم بھرپور انداز میں مزاحمت ہمارا جمہوری حق ہے۔ ممبر قانون ساز اسمبلی نواز خان ناجی کا کہنا تھا کہ جو ٹیکس مجھ سے کاٹا جارہا ہے اُس کے بارے میں سوال کرنے کا جب مجھے حق نہیں تو کس قانون کے تحت مزید ٹیکس لگایا جارہا ہے۔ یہ اقدام اقوام متحدہ کے چارٹرڈ کی کھلی خلاف ورزی ہے۔

اس موقع پر اپوزیشن لیڈر کپٹن شفیع خان نے کل ٹھیک تین بجے اسلام آباد پریس کلب کے سامنے بھرپور احتجاج کرنے کا فیصلہ کرتے ہوئے راولپنڈی اسلام میں مقیم گلگت بلتستان کے طلباء اور عوام کو شرکت کی دعوت دی ہے۔

About admin

اپنی رائے کا اظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

*

apental calc