حکومت گلگت بلتستان کی طرف سے اسکالر شب وظیفے کی عدم فراہمی( سو ژو چائینہ) میں ووکیشنل ٹریننگ کیلئے جانیوالے طلباء معاشی تنگدستی کا شکار ، گھروں سے کھانے پینے کے پیسے منگوانے پر مجبور۔

اسلام آباد ( نامہ نگار خصوصی ) گلگت بلتستاں حکومت کی طرف سے سکالرشپ پر ووکیشنل ٹریننگ کیلئے چائینہ بھیجنے جانیوالے سٹوڈنٹس وظیفوں کی بروقت عدم فراہمی کی وجہ ہے دیار غیر میں معاشی مسائل سے دوچار ہو گئے ۔ 26 اکتوبر 2017 کو تین سال کیلئے ٹریننگ پر چائینہ پہنچنے والے طلباء کھانے پینے کیلئے گھر سے پیسے منگوانے پر مجبور ہیں اور کئی طلباء پر فاقوں کی نوبت تک آئی ہے۔ طلباء نے تحریر نیوز سے بات چیت کرتے ہوۓ کہا کہ حکومتی نمائندہ جو ہمیں چائینہ چھوڑ گئے اب فون تک نہیں اٹھا رہے ہیں ،کبھی وزیر اعلی کی عدم موجودگی اورکبھی دوسرے بہانے کر کے وظیفے بروقت نہ بھجینے کی وجہ سے ہمیں سخت پریشانی کا سامنا ہے ایسے میں ہمارے لیئے اپنی ٹریننگ جاری رکھنا تقریبا نا ممکن ہو گیا ہے ۔ ہمارے نمائندے سے بات چیت کرتے ہوۓ طلباء پھٹ پڑے اور حکومت گلگت بلتستاں کے خلاف شکایت کے انبار لگا دئیے ۔ اُن کا کہنا تھا کہ شروع میں ہمیں گلگت بلایا اور کہا کہ گلگت سے چائینہ تک کے تمام اخراجات جی بی حکومت برداشت کرے گی مگر بعد میں گلگت سے راولپنڈی تک کا کرایہ اور دیگر خرچہ جات بھی ادا نہیں کئے گئے۔ انہوں نے کہا کہ دیار غیر میں ہماری اپنی حکومت کی عدم توجہی کی وجہ سے ہم بہت مایوس ہیں اور کئی لڑکے پڑھائی چھوڑ کر واپس جانے کی سوچ رہے ہیں ، انہوں نے وزیر اعلی گلگت بلتستان اور چیف سیکریٹری سے مطالبہ کیا ہے وہ فوری طور پر ان کی خبر لیں اور انہیں وعدے کے مطابق تمام وظیفے بر وقت بھجدیں تاکہ وہ پوری توجہ سے اپنی پڑھائی مکمل کر سکیں اور واپس آکر ملک اور قوم کی خدمت کر سکیں ، طلباء کا کہنا تھا کہ دیار غیر میں ان کیلئے ایک پل بھی جینا مشکل ہے۔

About admin

اپنی رائے کا اظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

*

apental calc