پاکستان میں سالانہ ٹیکس چوری کے حوالے سے اقوام متحدہ کا ہوشرباء انکشاف۔

اسلام آباد (این این آئی)عالمی اداروں نے پاکستان میں ٹیکس چوری پر تشویش کا اظہار کیاہے۔اقوام متحدہ کے ادارہ معاشی اور سماجی کمیشن نے پاکستان میں سالانہ 540 ارب روپے کی چوری کی نشاندہی کی ہے۔اقوام متحدہ کے ادارہ معاشی و سماجی کمیشن نے اپنی رپورٹ میں کہاہے کہ پاکستان میں ٹیکس چوری سے معیشت کو سالانہ 1.8 فیصد کا نقصان ہو رہا ہے کیونکہ پاکستان کا ٹیکسوں کا نظام مساوی نہیں ہے۔ رپورٹ کے مطابق با اثر طبقات ٹیکسوں کے دائرہ کار سے باہر ہیں اور پاکستان کو اپنی آمدن بڑھانے کے لیے ٹیکسوں کا دائرہ کار بڑھانا ہوگا۔
دوسری طرف گلگت بلتستان جس خطے کے حوالے سے وفاق پاکستان کا بار بار اعلان کرنے کے باوجود کہ یہ خطہ آئینی اور قانونی طور پر پاکستان کا حصہ نہیں لیکن ٹیکس نافذ کرنے کیلئے بضد نظر آتا ہے تاکہ چوری کے شرح میں مزید اضافہ ہوسکے اور غریب عوام مزید غربت کی چکی میں پستا رہے۔ یاد رہے گلگت بلتستان بین الاقوامی سطح پر متازعہ خطہ ہے اس خطے کی مستقبل کے حوالے سے اقوام متحدہ کی نگرانی میں رائے شماری ہونا باقی ہیں لیکن یہاں کے عوام کو گزشتہ ستر سالوں سے نہ ہی متنازعہ حیثیت پر حقوق میسر ہیں نہ ہی پاکستانی شہری کے برابر۔

About admin

اپنی رائے کا اظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

*

apental calc