ضلع نگر میں قیمتی جنگلی اور نایاب جانوروں کا شکارعروج پر ہیں محکمہ وائلڈ لائف تمام تر صورت حال سے بے خبر ۔

نگر ( اقبال راجوا) لیٹی گاہ سے لے کر گوچ ویلی نگر کے اختتامی حدود تک ۲۰ کلومیٹر کا علاقہ وائلڈ لائف کے نظروں دور، قیمتی جنگلی اور نایاب جانور شکاریوں کے گولیوں کا نشانہ بن رہے ہیں اگر یہی صورتحال جاری رہی تو وہ دن دور نہیں کہ جنگلی حیات کے صرف قصے کہانیوں یا کتابوں میں تصاویر میں ہی دیکھنے کو ملیں گے۔ علاقے کے لوگوں کا کہنا ہے کہ کے کے ایچ سے اتر کر دریا کراس کر کے دوسری طرف جانے والے قیمتی مارخور اور دیگر جانوروں کا پہاڑ کی چوٹی تک پیچھا کر کے ان کا شکار کیا جاتا ہے۔ لیکن محکمہء وائلڈ لائف کے نقشے میں بیس کلومیٹر تک پھیلا ہوا علاقہ ابھی تک آیا ہی نہیں ہے۔ عوامی حلقوں نے محکمہء جنگلی حیات کے تحفظ کے لئے فوری اقدامات کی ضرورت پر زور دیا ہے۔اتنے سارے علاقے میں ہر قسم کے جنگلی پرندے ،درندے اور مارخور کی کئی اقسام پائی جاتی ہیں ۔ اکثر یہ جنگلی جانور بوئنگ،نیلئے برئیے،برکت،ہونئیار ،فایا تا اصارن گلیشئیر تک پھیلے ہوئے ہیں ۔ اس کے علاوہ راکاپوشی ایریاء سے بھی مارخور دیریا پار کر کے ان علاقوں میں پہنچ جاتے ہیں ۔ اس علاقے میں محکمہء وائیلڈ لائف کا کوئی ایک فرد نہیں ہے ان سے رابطہ کیا جاتا ہے تو کہا جاتا ہے کہ سٹاف کی کمی کے سبب اتنے وسیع و عریض علاقے کو کور نہیں کیا جا سکتا۔ اہم بات یہ ہے کہ وائلڈ لائف کی نگرانی نہ ہونے کے سبب ٹرافی ہنٹنگ سے علاقے کے عوام کو ہونے والی آمدنی سے محروم ہونے کے ساتھ قیمتی جنگلی حیات بھی آئی دن شکاریوں کے بندوقوں سے نکلی گولیوں کا نشانہ بن رہے ہیں۔

About admin

اپنی رائے کا اظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

*

apental calc