جبری ٹیکس کا معاملہ گھمبیر صورت حال اختیار کر رہا،ایک طرف حکومتی نمانئدوں میں غیرسنجیدگی دوسری طرف عوامی ایکشن ، تاجر اتحاد نے ضلعی سطح پر عوامی اگہی مہم شروع کیا ہوا ہے۔

گلگت ( نمائندہ خصوصی) ٹیکس ایشو پر حکومتی مذاکراتی ٹیم نے پریس کانفرنس میں دوٹوک موقف اپنا ہوئے ڈپٹی اسپیکر جعفراللہ خان نے حسب سابق جارحانہ وکٹ کھیلتے ہوئے انٹی ٹیکس مومنٹ کو سرپسندی کا لقب دے دیا۔ پریس کانفرنس میں حکومت کی جانب سے کہا گیا کہ حکومت عوام کی ڈیمانڈ پر ٹیکسز ایشو کے حل کے لیے سنجیدگی سے کام کررہے ہیں اور حکومت چاہتی ہے تمام مسائل کو مذاکرات کے ذریعے حل کیا جائے ۔ حکومتی نمائندوں کا یہ بھی کہنا تھا کہ اگر کسی نے حکومت اور ریاست کو چیلنج کرکے شر پھیلانے کی کوشش کی تو حکومت شرپسندوں کے خلاف آہنی باتھوں سے نمٹیں گی اور قانون کے کٹہرے میں کھڑا کرے گی۔ دوسری طرف عوامی ایکشن کمیٹی اور تاجر اتحاد اس وقت پورے گلگت بلتستان کے دورے پر ہیں اور چارٹرڈ آف ڈیماند پر عمل درآمد تک خاموش نہیں بیٹھنے کا اعلان کیا ہے۔ المیہ یہ ہے کہ حکومت کوشش کرتے ہیں کہ عوامی معاملات پر افہام تفہیم کے ذریعے بات چیت کرنے اور اپنے کئے ہوئے وعدوں پر عمل درآمد کرنے کے اخبارات میں روازنہ نت نئے بیانات دیکر عوام میں مزید اشتعال پیدا کررہا ہے جسکا نقصان حکومت کو ہی اُٹھانا پڑے کا کیونکہ عوامی ایکشن کمیٹی نے مطالبات منظور نہ ہونے کی صورت مین سول نافرانی کا اعلان کیا ہوا ہے۔

About admin

اپنی رائے کا اظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

*

apental calc