ضلع کھرمنگ میں سہولیات سے خالی مڈل سکول ہلال آباد کے اسٹوڈنٹس وزیر تعلیم کی راہ دیکھ رہے ہیں۔

کھرمنگ(پ،ر) تعلیم ہر انسان کا بنیادی حق ہے اور گلگت بلتستان میں شرح خواندگی پاکستان بھر سے کہیں ذیادہ بتایا جاتا ہے۔ لیکن حقیقت یہ ہے کہ گلگت بلتستان کے بہت سے ایسے علاقوں میں آج بھی غریب بچوں کو علم حاصل کرنا ایک چیلنج سے کم نہیں۔حکومت گلگت بلتستان کی جانب سے نظام تعلیم کو بہتر کرنے کا دعوی اپنی جگہ لیکن اس حقیقت سے بھی انکار نہیں کیا جاسکتا ہے کہ معیار تعلیم کو بہتر بنانے کیلئے جس تیزی سے کام کرنے کی ضرورت تھی وہ نظر نہیں آرہا۔وزیر تعلیم ویسے تو خود تعلیم یافتہ اور علم دوست انسان ہے لیکن گلگت بلتستان میں جہاں ترقیاتی کاموں کے حوالے سے قبرستان کا سماں ہے وہیں تعلیمی نظام میں بھی بہت ساری خامیاں ہیں جسے حل کرنا ایمرجنسی نافذ کئے بغیر ممکن نہیں۔ سکردو شہر سے صرف 65 کلومیٹر کی دوری پر موجود گاوں ہلال آباد میں مڈل سکول کی عمارت تو موجود ہے لیکن یہاں پڑھنے والے بچے آج بھی کرسی اور ٹاٹ(بچھونا ) جیسے بنیادی سہولیات سے محروم ہیں۔ اہل علاقہ کے مطابق محکمہ تعلیم کھرمنگ کو اس حوالے سے بار بار یاد دہانی کے باوجود اساتذہ کی کمی اور طلباء طالبات کیلئے بنیادی سہولیات فراہم کرنے میں ناکام رہے۔
حکومت کو چاہئے کہ اخباری بیانات کی دنیا سے نکل گلگت بلتستان سے تعلیمی پسماندگی کو دور کرنے کیلئے عملی اقدام کریں۔

About admin

اپنی رائے کا اظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

*

apental calc