بلدیاتی الیکشن کرانے میں ناکام نون لیگ کی حکومت گلگت بلتستان میں طبقاتی نظام کی بحالی کیلئے سرگرم۔

گلگت ( تحریر نیوز) جاگیردرانہ نظام، طبقاتی نظام جسے گلگت بلتستان کی اصطلاح میں نمبرداری نظام کہتے ہیں۔ ڈوگروں کے دور میں عوامی کی استحصالی کیلئے مہاراجہ نے یہ نظام پورے ریاست جموں کشمیر میں مختلف ناموں نے متعارف کرایا جس کا مقصد عوامی استحصالی کے سوا کچھ نہ تھے۔ آج گلگت بلتستان کی حکومت جو سیاسی طور پر مکمل ناکام نظر آتا ہے بلدیاتی الیکشن کرانے کیلئے تیار نہیں لیکن ایک بار پھر عوام پر غیر منتخب افراد  نمبرداری کے نام پر مسلط کرنے کیلئے تیاریوں میں مصروف ہیں تاکہ نمبرداری سسٹم بحال کرکے غریب عوام ایک بار پھر مقامی نمبرداروں کے چنگل میں پھنس جائے اور حکومت کو لوٹ مار کی آذادی ملے ۔ حکومت کی طرف سے کہا یہ جارہا ہے کہ نمبردار سرکار اور عوام کے درمیان ایک پل کے مانند ہے۔ نمبردار کو معاشرے میں مزید فعال اور موثر بنانے کے لئے سرکاری سطح پر اقدامات اٹھائے جائینگے۔ نمبرادر نظام کے حوالے سے حکومت کا یہ بھی موقف ہے کہ نمبردار نہ صرف سرکار کی مدد کرتے ہے بلکہ عوام میں علاقائی رسم ورواج کے مطابق مختلف سماجی کاموں میں عوام کی بھر پور خدمت کرتی ہیں۔
لیکن حقیقت اس کے منافی ہیں آج کے اس جدید معاشرے میں جب دنیا جمہوریت کے کئی منازل طے کرکے قوموں کی زندگی سنورے کی کوششوں میں مگن ہیں تو گلگت بلتستان میں نمبرادروں کو عوام پر مسلط کرنے کی باتیں جمہوریت کے منافی اور عوام کی استحصالی ہے ۔ نمبرداری سسٹم کی بحالی کا مطلب کسی بھی علاقے میں ایک ان پڑھ شخص کو تعلیم یافتہ معاشرے پر مسلط کرکے قومی حقوق اور سماجی مسائل ،لوٹ مار کے خلاف نئی نسل کا راستہ روکنا ہے ورنہ نمبردار چاہئے کسی بھی علاقے کا ہو عوام کی خدمت نہیں بلکہ سرکاری فنڈز کھانے کرپٹ عناصر کی پشت پناہی کرنے کے حوالے سے مشہور ہیں۔

About admin

اپنی رائے کا اظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

*

apental calc