سکردو بس اڈے پر سہولیات،نظام اور قانون کا فقدان کھرمنگ،شگر اور خپلو کے مسافرین ذہنی اذیت کا شکار۔

سکردو (تحریر نیوز ) سکردو انتظامیہ نے بازار میں بڑھتی ہوئی ٹریفک کے پیش نظر تمام بس اڈوں کو شہر سے دور منتقل تو کردیا لیکن سہولیات فراہم کرنے میں ناکام ہوئے۔ اس وقت سکردو سے دیگر اضلاع کو جانے والے مسافرین بس اڈے پر کئی قسم کے مسائل درپیش ہیں لیکن کوئی پرسان حال نہیں۔ کیونکہ ایک طرف تو اڈے پر گاڑیوں کو کھڑا کرنے کے لئے مناسب پارکنگ کی سہولت دستیاب نہیں دوسری طرف اڈے پر خواتین بوڑھے اور بچوں کو رہنے کے لئے کوئی انتظار گاہ آج تک نہیں بنا سکے۔ اس کے علاوہ حکومت کی جانب سے مسافروں کی سہولت کیلئے آڈے سے بازار اور دیگر مقامات تک جانے کے لئے کوئی مناسب ٹرانسپورٹ بھی انتظام نہیں کیا گیا  جس کی وجہ سے مسافروں سے ٹیکسی ڈرائیور حضرات اپنے من مانی کے پیسے بٹور رہے ہیں۔
سرکاری نرخ نامے کے مطابق کھرمنگ خپلو اور شگر سے سکردو اڈے تک کے کم سے کم کرایہ دو سو روپے ہیں اور سکردو اڈے سے اندرون شہر جانے کے لئے ایک سو پچاس سے لیکر تین سو روپے تک کرایہ وصول کرتے ہیں. اس تمام معاملے میں ٹریفک پولیس بلکل ہی لاتعلق نظر آتا ہے کیونکہ کہا یہ جارہا ہے کہ ٹریفک پولیس ٹیکسی ڈرائیورز سے باقاعدہ ہفتہ وصولی کرتے ہیں اس وجہ سے ٹیکسی ڈرائیورز ایک طرح سے مافیا بنا ہوا ہے۔
عوامی حلقوں کا کہنا ہے کہ یہ سراسر ناانصافی ہے کیونکہ سکردو میں جانے والے اکثر لوگ یا تو طالب علم ہوتے ہیں یا مزدور یا مریض. مسافرین کا کہنا تھا کہ سکردو انتظامیہ کو چاہئے کہ بس اڈے سے اندرون شہر جانے کے لئے مناسب ٹرانسپورٹ کا بندوبست کریں۔

About admin

اپنی رائے کا اظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

*

apental calc