خالصہ سرکار جیسے بنیادی اور اہم ترین معاملے کو وزیر اعظم کے سامنے پیش نہ کر کے حکومت گلگت بلتستان نے ثابت کیا کہ وہ قبضہ گروپ ہے۔ رہنما پیپلزپارٹی

سکردو(پ،ر) پیپلز پارٹی میڈیا سیل بلتستان ڈویژن کے انچارج طالب حسین اور ڈپٹی انچارج قیصر علی شاہد نے کہا ہے کہ خالصہ سرکار جیسے بنیادی اور اہم ترین معاملے کو وزیر اعظم کے سامنے پیش نہ کر کے صوبائی حکومت نے ثابت کیا کہ وہ قبضہ گروپ ہے۔جس شخص کو اسمبلی کا گیٹ کیپر ہونا چاہئے تھا اسکا ڈپٹی سپیکر ہونا اسمبلی کے معیار پر سوالیہ نشان ہے۔کونسل کے ممبران نے چارٹر آف ڈیمانڈ کے بجائے کاسہ گداگر لے کر بھکاریوں کی طرح ٹیکس سے چھوٹ مانگ کر گلگت بلتستان کے عوام کی توہین کی حالانکہ گلگت بلتستان کی متنازعہ حیثیت کی وجہ سے ٹیکس لاگو نہیں ہوتا اور اسی نقطے کو مد نظر رکھتے ہوئے ٹیکس کے خاتمے کا مطالبہ کرنا چاہئے تھا۔اپنے لئے گاڑیوں کی مانگ اور بیرون ملک دوروں کے مطالبات سے ممبران کونسل کے عزائم اور اقتدار کا لالچ کھل کر سامنے آیا ہے۔سپیکر گلگت بلتستان اسمبلی بیوروکریسی کی آشیرباد حاصل کرنے میں مگن جبکہ ڈپٹی سپیکر پہلے گالیاں دے کر پھر ان سے معافی مانگتے ہیں۔ڈپٹی سپیکر کے سکردو روڈ کے حوالے سے خیالات انکی بدنیتی اور ذہنی پستی کا آئینہ دار ہیں۔وزیر اعظم کا عدم استقبال اور مکمل شٹر ڈاون ہڑتال گلگت بلتستان کے عوام کے اس اجتماعی شعور کا ثبوت ہے جو پیپلز پارٹی کے صدر امجد ایڈوکیٹ نے حق ملکیت اور حق حاکمیت تحریک کے ذریعے دیا ہے۔یہ واقعات صوبائی حکومت کے اعصاب پر بجلی بن کر گرے ہیں۔جس سے تلملا کر اوٹ پٹانگ حرکتیں کی جا رہی ہیں۔گلگت بلتستان کے عوام کے اتفاق و اتحاد اور سیاسی بلوغت کو خراج تحسین پیش کرتے ہیں کہ نااہل وفاقی اور صوبائی حکومت کو بری طرح سے مسترد کر دیا۔

 

About admin

اپنی رائے کا اظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

*

apental calc