گلگت بلتستان تعلیمی انقلاب لانےکے حوالے سے اخبارات میں انقلابی بیانات اپنی جگہ، لیکن وزیراعلیٰ اپنے حلقے کے تعلیمی مسائل حل نہیں کرسکے۔

گلگت ( پ،ر ) ایسا لگتا ہے کہ گلگت بلتستان میں ہر کام اخباری بنایات تک ہی محدود ہوکر رہ گیا ہے،عوامی مسائل کے اتنے انبھار ہیں کہ حکمران اگر حل کرنے بیٹھ جائیں تو چوبیس گھنٹہ کام کریں تو بھی بیس سال لگ سکتا ہے۔ تفصیلات کے مطابق وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان کے آبائی حلقہ سب ڈویژن جگلوٹ کے طلبہ کھلے آسمان تلے سات سو سے زائد طالبات صرف چار اساتذہ کے رحم و کرم پر تعلیم حاصل کرنے پر مجبور ہیں سکول میں باتھ روم تک کی سہولت موجود نہیں۔ عمائدین جگلوٹ کی شکایت پر اسسٹنٹ کمشنر جگلوٹ کا ٹینٹ گرلز مڈل سکول کا دورہ کیا تو عوام اور والدین نے شکایات کے انبار لگا دئیے ، اسسٹنٹ کمشنر نے مڈل گرلز سکول بلڈنگ کی مرمت ، دیگر مسائل کے حل سمیت اساتذہ کی کمی کو بھی فوری دور کرنے کی یقین دہانی کرا دی ۔

 

About admin

اپنی رائے کا اظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

*

apental calc