مشروط صوبے کی بازگشت کے ساتھ چیرمین گلگت بلتستان نیشنل کانفرنس ملکہ بلتستانی کی دبنگ انٹری، ریاست پاکستان اور چین سے بڑا مطالبہ کردیا.

کراچی (ٹی این این) اُنیس اٹھاسٹھ کی دھائی سے کراچی میں گلگت بلتستان کے قومی حقوق کی جہدوجہد کیلئے متحرک برسرپیکار گلگت بلتستان نیشنل کانفرنس کی چیرمین ملکہ بلتستانی نے گلگت بلتستان کو مشروط صوبہ بنانے کی خبروں کے بعد خاموشی توڑ دی.
امریکہ سے ہمارے نمائندے سے خصوصی واٹس ایپ گفتگو کرتے انہوں نے مطالبہ کیا ہے کہ اقوام متحدہ کے چارٹررڈ کے مطابق گلگت بلتستان کو آزاد کشمیر طرز پر مکمل داخلی خودمختاری دیکر چین سے اقصائے چن اور شگزگام کو واپس لیکر گلگت بلتستان میں شامل کیا جائے کیونکہ وہ علاقے قانونی طور پر گلگت بلتستان کا اٹوٹ انگ ہے.
اُنہوں نے دعویٰ کیا ہے کہ گلگت بلتستان کا براہ راست کشمیر سے کوئی تعلق نہیں بلکہ خود ریاست پاکستان نے مسلہ کشمیر میں گلگت بلتستان کو پھنسایا ہے اور آج چین کی خوشنودی کیلئے مشروط صوبے کے نام پر ہمارے وسائل پر قبضہ کرنے کی کوششیں کی جارہی ہے. انکا کہنا تھا مسلہ کشمیر کی حل تک کیلئے  ہمارے خطے کی اپنی الگ جداگانہ حیثیت اور اقوام متحدہ کے چارٹررڈ 13 آگست 1948 کے مطابق آزاد کشمیر طرز کا نظام آئین، جھنڈا اور عدالتی نظام دیں اور جب رائے شماری ہوگی اس وقت گلگت بلتستان کے عوام کا ووٹ مکمل طور پاکستان کے حق میں ہوگا یہ میرا یقین ہے. انہوں گلگت بلتستان کے عوام کے نام خصوصی پیغام میں کہا ہے کہ انشاء اللہ گلگت بلتستان نینشنل کانفرنس کے چیئرمین کی حیثیت سے بہت جلد پاکستان آکر قومی تحریک کو مزید آگے بڑھاوں گی.
یاد رہے کراچی میں مقیم ملکہ بلتستانی نے گلگت بلتستان نیشنل کانفرنس کے چیئرمین کی حیثیت سے کراچی میں مقیم منقسم لداخ اور گلگت بلتستان کمیونٹی کے مسائل کی حل اور بلتستان اسٹوڈنٹس فیڈریشن اور قراقرم اسٹوڈنٹس آرگنائزیشن طلبہ تنظیموں کی قیادت کرتی رہی ہے اور کراچی میں حقوق کی گلگت بلتستان کی انکی جہدوجہد کی طویل داستان ہے اور مختلف بین الاقوامی فورم پر بھی گلگت بلتستان کی نمائندگی کرتی رہی ہے.

About TNN-GB

اپنی رائے کا اظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

*

apental calc