کے ائی یو انتظامیہ کی جانب سے 15 سمتبر سے یونیورسٹی کھلنے کے فوراً بعد امتحانات لینے کا فیصلے پر این ایس ایف نے مسترد کردیا

گلگت (ٹی این این) نیشنل اسٹوڈنٹس فیڈریشن گلگت بلتستان کے ذمہ داروں احسان کریم،نعمان خان، رحمت جلال،فرید علی، پیار علی ، علی شیر خان، واجد علی جمعہ و دیگر نے کہا ہے کہ قراقرم انٹرنیشنل یونیورسٹی انتظامیہ کی جانب سے 15 سمتبر سے یونیورسٹی کھلنے کے فوراً بعد امتحانات لینے کا فیصلہ قابل قبول نہیں۔کرونا وبا کی چھٹیوں کے بعددور دراز علاقوں کے طلبا وطالبات آن لائن کلاسز لینے سے رہ گئے تھے۔ اس وقت جب یہ مسلہ اٹھایا گیا تو یونیورسٹی انتظامیہ نے کہا تھا کہ آن لائن کلاسز طلبا کو مصروف رکھنے کے لیے لے رہے ہیں جن کے پاس سہولیات نہیں وہ یونیورسٹی کھلنے کے بعد کلاسز لیں گے اس کے بعد امتحانات ہونگی مگر ابھی 17 سمتبر سے امتحانات لینے کے لئے اعلان بھی کر چکے ہیں جو کہ ان علاقوں کے طلبا کے ساتھ زیادتی ہے جہاں انٹرنیٹ کی سہولت میسر نہیں ہیں۔
این ایس ایف گلگت بلتستان کی قراقرم انٹرنیشنل یونیورسٹی مین کمپس غذر،ہنزہ اور دیامر کمپس سمیت بلتستان یونیورسٹی کے طلبا و طالبات کے ساتھ ہیں ہم سمجھتے ہیں کہ کلاسزز لے بغیر امتحانات لینا کسی صورت بھی قابلِ قبول نہیں۔
انہوں نے کہا ہے کہ قراقرم انٹرنیشنل یونیورسٹی اور بلتستان یونیورسٹی نے بی اے / بی ایس سی کے طلبا کو بھی آگے جماعت میں بھیجے تاکہ طلبا سال ضائع ہونے سے بچ جائیں۔

About TNN-ISB

اپنی رائے کا اظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

*

apental calc