تحریک انصاف نے گورنر شپ کی آفر کی، گلگت بلتستان میں خطرناک وبا پھیل رہا ہے اسے ہم ہی ختم کرینگے سید مہدی شاہ کا دبنگ انٹرویو۔ تفصیلات کیلئے لنک کلک

اسکردو(انٹرویو منظور ناز)سابق وزیراعلی گلگت بلتستان و سینئر ایگزیکٹو ممبر پاکستان پیپلزپارٹی سید مھدی شاہ نے اپنی خصوصی انٹرویو میں کہا ہے کہ 2015میں الیکشن ہارنے کی وجہ راجہ جلال کا پارٹی سے جدا ہونا تھا،راجہ جلال پارٹی کے ساتھ رہے عین الیکشن کے وقت انہوں نے راہیں جداکرلی جس کی وجہ سے راجہ خودبھی ہار گئے اورمجھے بھی ناکامی کا سامنا کرنا پڑا ،انہوں نے کہا اگر گلگت بلتستان میں پیپلزپارٹی کومینڈیٹ ملی تو بلاول جس کو نامزد کریں وہ وزیر اعلی ہوگا،گلگت بلتستان میں ہم نے جو نظام پہلے چلایا تھااب بھی چلائیں گے 2009میں ہم نئے تھے اب تجربہ کار ہوگئے ہیں،پارٹی منشور کے حوالے سے ان کاکہناتھاالیکشن حق ملکیت، حاکمیت اور روزگار کے نعرے کےساتھ لڑیں گے،اسکردوحلقہ ون کے حوالے سے ان کاکہناتھا حلقہ ون سکردو میں صحت کے نظام کو بہتر بنانے کے لیے کام کریں گے معرفی فاونڈیشن کو ہسپتال بنانے میں تعاون کیے ہیں ،پچھلے الیکشن میں ہمیں ہرایا گیا سی پیک کی وجہ سے نواز شریف نے جن سے تعاون لیا تھا انہوں نے ہمیں ہرایا تحریک انصاف نے گورنر شپ کی آفر کی،اگرتحریک انصاف جوائن کرتا توآج گورنرھوتا لیکن میں نے ٹھکرایا یہ کہ گورنرشپ ضمیر کے مقابلے میں چھوٹاعہدہ ہے میں ضمیرفروش نہیں ہوں پیپلز پارٹی گلگت بلتستان کا محسن ہے ڈگری جالج اسکردو میرے سفارش سے بھٹو نے بنایا،پیپلزپارٹی سیکرٹریٹ بندکرنے کے حوالے سے ان کاکہناتھاکہ سیکریٹریٹ بند کرنے کی بات غلط ہے وہ پارٹی چھوڑنے کا بہانا تھا،انہوں نے کہابے روزگاری کا خاتمہ اولین ترجیح ہوگی تمام اسمبلی ممبران کو کالج کے لیے سپیشل فنڈز مختص کریں راجہ ناصر کو پارٹی میں دورازہ کھلاہواہے لیکن ٹکٹ کی شرط نہیں، ٹکٹ جیالوں کو دے گا تحریک انصاف لوٹوں کی پارٹی ہے راجہ ناصر کو ٹکٹ دینے کا جواز نہیں بنتا،سکردومیں اکبر تابان سے مقابلہ ہوگا جیت گیا تو شتونگ نالہ کوسدپارہ ڈیم میں شامل کریں گے بلتستان میں سب سے خطرناک وبا بے روزگاری ہے اسے ختم کرنا میری اولین ترجیح ہوگی اس کیلئے ہمہ وقت جدوجہدکریں گے

About TNN-ISB

اپنی رائے کا اظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

*

apental calc