حفیظ سرکار کی بلتستان دشمنی یہاں کے عوام اور ڈاکٹروں نے تاریخی کارنامہ سر انجام دیا اخر وہ کیا ہے؟ تحریر نیوز نے بڑا کھوج لگا لیا

سکردو(تحریر نیوز) سکردو ڈسٹرکٹ ہسپتال بلتستان کا واحد ہسپتال ہے جہاں پر کئی عرصے سے مختلف شعبوں کے ماہر ڈاکٹرز موجود ہےجو یہاں عوام کیلئے کسی نعمت سے کم نہیں ہے مگر یہاں یہ بات کہنا چاہتا ہوں کہ مگر ہمیشہ سے ڈسٹرکٹ ہسپتال سکردو کو نظر انداز کرتا رہا اور ہر سہولیات سے محروم رکھا گیا اور چار اضلاع کا بوجھ ہونے کے باوجود اس ہسپتال کو سیاسی مداخلت کی وجہ سے بہت نقصان پہنچایا گیا اور اس ایک وجہ یہ گلگت ریجن اور بلتستان ریجن میں الگ الگ قوم اباد ہے ان کے رہن سہن اور زبان سب کچھ الگ ہے اور یہ بات سچ ہے کہ گلگت ریجن کے لوگ اپنے ہی علاقے کو پورا گلگت بلتستان سمجھتا ہے اسی وجہ سے حفیظ سرکار نے محکمہ صحت کے سارا محکمانہ سارا بجٹ گلگت ریجن میں خرچ کررہا ہے اور وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان نے گلگت میں پاگلوں کا ہسپتال دل اور کینسر ہسپتال بنایا گیا اہل سنت کیلئے 500 بیڈ کا سٹی ہسپتال فقیه جعفریہ کیلئے ڈسٹرکٹ ہسپتال کو اپ گریڈیشن کردیا ہے اور اور محکمانہ بجٹ بلتستان میں صرف %7 اور گلگت ریجن میں %%93 فیصد خرچ کررہا ہے اور کرونا وائرس کی وجہ چین طرف سے دینے والا تحفہ بھی سارا لوٹ لیا اور گلگت کو دے دیا سکردو کو محروم رکھا اور سکردو ڈسٹرکٹ ہسپتال دنیا کا واحد ہسپتال تھا جہاں پر ائی سی یو وارڈ بھی نہیں تھا جس کی وجہ سے کئی قیمتی جانیں ضائع ہوچکا یے اور میڈیا اور سول سوسائٹی نے کئی عرصے سے شعور کررہا تھا اس اہم ایشو کو لیکر اور کرونا وائرس کی وبا جب دنیا میں کے کونے کونے پہنچ گیا اور جس نے بلتستان کو بھی اپنے لپیٹ میں لئے لیا اور یہاں پر سہولیات کا فقدان دیکھ کر اور صوبائی و وفاقی حکومت کی طرف سے کوئی عدم توجہ نہیں ہونے کی وجہ سے یہاں کے ہمدرد اور عوام دوست علاقے سے محبت کرنے والے ڈاکٹروں نے ایک اہم اقدام اٹھایا اور بلتستان میں ایک چند مہم کا اغاز کردیا اور اللہ تعالیٰ نے ان کی اس اچھے اقدام کے کو کامیاب بنایا اور سکردو میں اپنی نوعیت کے جدید ترین آئی سی یو یونٹ کا قیام عمل میں لایا گیا ہے،، جہاں جدید ٹیکنالوجی سے لیس 3 وینٹیلیٹرز اور 6 کارڈِک مشینیں سمیت تمام مطلوبہ طبی آلات موجود ہیں ،،

 ہمارے مقامی ڈاکٹروں کے مطابق اپنی مدد آپ قائم ہونے والے اس آئی سی یو کے بانی بلتستان کے عوام بالخصوص وہ مائیں اور بہنیں ہیں جنہوں نے اپنے خون پسینے کی کمائی حتٰی کہ اپنی قیمتی زیورات کے عطیات دے کر انسان دوستی کی لازوال مثال قائم کی ہے ،

عزت مآب ڈاکٹر صاحبان! آپ کی جانب سے عوام کو کریڈٹ دینے کی ہم حمایت کرتے ہیں، تاہم دُکھی انسانیت کی خدمت کا یہ شاندار عملی مظاہرہ آپ تمام ہونہار اور حقیقی قوم پرست بیٹوں کی مرہونِ منت ہی انجام پایا ہے ،، اس میں کوئی شک نہیں کہ آپ جیسے پُرعزم فرزندانِ قوم نے جب حالات کی نزاکت کا احساس کرتے ہوئے جدید آئی سی یو یونٹ کے قیام کا بیڑا اُٹھانے کی ٹھان لی تو عوام نے بھر پور اعتماد کرتے ہوئے آپ کا جی جان سے ہاتھ بٹایا ((جس میں بقول آپ کے، دردِ دل رکھنے والے اللہ کے دوست مخیر حضرات سمیت، سفید پوش متوسط طبقے کے لوگ، روزانہ اُجرت پر کام کرنے والے مزدور، طلباء اور سب سے بڑھ کر اپنی قیمتی زیورات عطیہ کرنے والی خواتین شامل ہیں)) اور آپ نے ایک ماہ سے کم قلیل عرصے میں اپنا ہدف پورا کرکے قوم کے اعتماد کا بھرم رکھ لیا،،

آپ کے حق میں ہم صرف دُعا ہی کرسکتے ہیں ، باقی اس عظیم کارِ خیر کا اجر و انعام انشاءاللّہ اللّہ ربّ العزت عطا فرمائے گا اور حفیظ سرکار نے جس انداز میں بلتستان میں ہیلتھ کے شعبے کو نظر انداز کردیا وہ تاریخ کا حصہ بن چکا ہے اور ان کی اس اقدام کی وجہ سے گلگت ریجن سے بلتستان ریجن کے درمیان دوریاں بھی پیدا ہوگا ساتھ میں گلگت سے علیحدگی کی تحریک شروع ہوسکتا ہے اور جہاں دو قوم بستے ہیں وہاں پر انصاف ہونا لازمی ہے ورنہ اس کے بروئے نتائج بھی نکل سکتا ہے

About TNN-ISB

اپنی رائے کا اظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

*

apental calc