ضلع نگرکے کسانوں میں پھل دار پودوں کے تقسیم کا عمل شروع ہوگیا۔

نگر (اقبال راجوا) زراعت کا موسم شروع ہوتے ہی محممک زراعت نگر میں کسانوں کا تانتا بندھ گیا۔ محکمہ زراعت نگر نےنومبر سے ہی پھلدار درختوں کے حصول کے لئے کسانوں سے درخواستیں طلب کی تھیں جس کے بعد تمام علاقو ں سے 1032درخواستیں موصول ہوئیں۔ محکمہ زراعت نگرنےان درخواستوں پر 73ہزار پھلدار پودوں کا مطالبہ کیا تھا۔ ا بتدائی طور پر کوئٹہ اور پشاور سوات کے مختلف نرسریز سے اخروٹ بادام انار خو بانی سیب اور امریکن انگورکے 30ہزار پودے منگوائے گئےہیں۔ ان پودوں کو نگرکے تمام علاقوں میں مختلف تنظیمات اور سماجی کارکنان کے زریعے درخواست دھندگان میں تقسیم کا عمل شروع کیا گیا ہے۔ درخواست دھندہ سے ایک ورق پر تحریری معاہدہ کر کے دفتر میں ریکارڈ رکھا گیا ہے ۔ درخواست دھندگان کی جانب سے زمین کی مقدار لکھوا کر اس کے حساب سے پودوں کو دیاجارہا ہے۔ ایگریکلچر آفیسر میڈم سبیکہ بیگ کا کہنا تھا کہ پھلدار درختوں کی افزائش اور ان کی تربیت کے حوالے متعلقہ کسان کی طرف سے مقررہ زمین کا اچا نک دورہ کیا جائے گا جس کے دوران ادارے کی جانب سے دئے گئے پودوں کا جائزہ لیا جا ئے گا۔ کوئٹہ اور پشاور سے منگوائے گئے تمام پودے بالکل صحت مند ہیں تا ہم یہ پودے بڑے ہونے کے بعد کس قسم کا پھل دیں گے اس بارے کچھ نہیں کہا جا سکتا ہے۔ تا ہم ا۔مید ہے کہ ہمارے روایتی پودوں سے مختلف اور بہتر ہیں۔تمام پودے کسانوں کووزیر اعظم کے سونامی بلیئن ٹری پروگرام کے تحت مفت تقسیم کئے جا رہے ہیں۔ کوئٹہ اور پشاور سے لانے کے بعد ان تمام پودوں کو غلمت نرسری اور فوڈ پراسیسنگ سینٹر میں محفوظ کیا گیا ہے جہاں سے اسی ھفتے میں نگر کے تمام یونین کو نسلات کے درخواست دھندگان کے حوالے کرنے کا سلسلہ شروع کیاجا چکا ہے۔ایگریکلچر آفس میں پودوں کے حصول کے لئے لوگوں کی کثیر تعداد ٹرالیوں میں بھرنے میں مصروف دکھائی دیئے۔

About TNN-GB

اپنی رائے کا اظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

*

apental calc