گلگت بلتستان عارضی طور پر پاکستان کے زیر انتظام ہیں۔ وزیر اعظم آذاد کشمیر۔

اسلام آباد(ٹی این این)وزیر اعظم آذاد کشمیر راجہ فاروق حیدر نے کہا ہے کہ گلگت بلتستان ریاست جموں کشمیر کا حصہ ہے اور پاکستان اپنے زیرِ انتظام کشمیر کو ضم نہیں کرنا چاہتا۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان اور اس کے زیرِ انتظام کشمیر کے لوگ بھارت کے اقدامات کی نفی اور اُنہیں مسترد کر رہے ہیں۔ وائس آف امریکہ اردو سروس سے خصوصی بات چیت میں اُنکا مزید کہنا تھا کہ بھارت نے کشمیر سے متعلق جو اقدامات کیے ہیں وہ حتمی نہیں ہیں۔ کشمیر کا مسئلہ اپنی جگہ ویسے ہی موجود ہے۔
وائس آف امریکہ کے نمائندے نے جب اُن سے سوال کیا کہ بھارت کے زیرِ انتظام کشمیر کے بھارت سے الحاق کی مخالفت کیوں کی جا رہی ہے؟ جب کہ گلگت بلتستان کا انتظام بھی تو پاکستان کے پاس ہے؟ سوال کے جواب میں وزیر اعظم راجہ فاروق حیدر نے کہا کہ حکومتِ پاکستان کو معاہدہ کراچی کے تحت گلگت بلتستان کا انتظام عارضی طور پر دیا گیا تھا۔ اُنہوں نے مزید کہا کہ یہ باتیں کی جاتی رہی ہیں کہ گلگت بلتستان کو پاکستان کا صوبہ بنا دیا جائے۔ لیکن ایسا نہیں ہو سکتا اور پاکستان ایسا نہیں کرے گا۔
راجہ فاروق حیدر نے کہا کہ 1973 کے آئین اور اس میں کی گئی کسی بھی ترمیم میں گلگت بلتستان کو پاکستان کا صوبہ نہیں بنایا گیا بلکہ اسے ریاست جموں کشمیر کا ہی حصہ قرار دیا گیا ہے۔اُن کا کہنا تھا کہ پاکستان کی حکومت نے اب تک کوئی ایسا قدم نہیں اٹھایا جس سے پاکستان کے کشمیر سے متعلق مؤقف کو نقصان پہنچتا ہو۔ امید ہے کہ مستقبل میں بھی ایسا کچھ نہیں کیا جائے گا۔
یاد رہے گلگت بلتستان کے عوام اس حوالے سے بلکل ہی الگ نظریہ رکھتے ہیں گلگت بلتستان اسمبلی کے ممبران اور مختلف سیاسی مذہبی جماعتیں معاہدہ کراچی کو ایک طرح سے یکطرفہ معاہدہ قرار دیتے ہیں جس میں گلگت بلتستان کا کوئی سٹیک ہولڈر شامل نہیں تھے ۔گلگت بلتستان میں سیاسی اور مذہبی رہنماوں خاص طور پر یوتھ کی جانب سے سوشل میڈیا پر ہمیشہ سوال اُٹھاتے رہے ہیں کہ اقوام متحدہ کے قرارداد 13 اگست 1948 کی بنیاد پر جب آذاد کشمیر کو مسلہ کشمیر کی حل تک کیلئے ریاستی نظام مل سکتا ہے تو گلگت بلتستان کو کیوں وہ نظام نہیں دیا گیا حالانکہ اُس قراداد میں گلگت بلتستان اور مظفر آباد لوکل آتھارٹی کا حکم ہے۔ اس حوالے سے گزشتہ دنوں گلگت بلتستان اسمبلی میں اپوزیشن لیڈر کپٹن شفیع خان اور رکن اسمبلی نواز خان ناجی نے بھی اسلام آباد میں پریس کانفرنس میں گلگت بلتستان کسی قسم کا صوبہ بننا مسترد ہونے کے بعد اقوام متحدہ کے قرارداد کی بنیاد پر مسلہ کشمیر کی حل تک کیلئے مکمل داخلی خودمختاری کا مطالبہ کیا تھا۔

About TNN-GB

اپنی رائے کا اظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

*

apental calc