گلگت بلتستان میں امن امان کی صورت اُس وقت بہتر ہوئی جب ہم نے گلگت کے تمام تھانوں میں کسی بھی مسلک سے تعلق رکھنے والے کسی بھی فرد کی قتل کا ایف آئی آر دوسرے مسالک کے بجائے بااثرافراد اورانتظامیہ کے خلاف درج کرنے کیلئے عملی اقدام اُٹھایا۔ مولانا سلطان رئیس چیرمین عوامی ایکشن کمیٹی۔

گلگت( تحریر نیوز) چیرمین عوامی ایکشن کمیٹی مولانا سلطان رئیس نے موجودہ حکومت کی جانب سے امن کا کریڈیٹ لینے کے حوالے سے انکشاف کیا ہے کہ یہ اُس وقت کی بات تھی جب گلگت بلتستان میں لوگ ایک دوسرے سے ہاتھ ملانے کیلئے تیار نہیں تھے اور ہم نے بین المسالک میٹینگوں کے ذریعے اس مسلے کو ختم کرنے کا بیڑا اُٹھایا اور پہلے مرحلے میں باہمی مشاورت سے مسلک اہلسنت کے ایک نمائندے کو انتظامیہ کے پاس اس صورت حال کی جانچ پڑتال کیلئے بیجا تو معلوم ہوا کہ سرکاری افیسر ملازم کم بلکہ اہلسنت کا درد مند ذیادہ لگ رہا تھا،اسی طرح ہم نے دوسرے مرحلے میں مکتب اہل تشیع کے ایک نمائندے کو انتظامیہ سے امن امان کی صورت حال پر میٹینگ کیلئے باہمی مشورے سے روانہ کیا تو اُن کے سامنے ایسے پیش آیا جیسے گلگت بلتستان میں امن امان کی صورت حال کے اصل ذمہ دار اہلسنت ہیں۔

جب عوامی ایکشن کمیٹی کے رہنماوں نے جب ذمہ دار اداروں کے اس منافقانہ پالیسی کواپنی آنکھوں کے سامنے دیکھ لیا تو ہمیں اندازہ ہوگیا تھا کہ دراصل سرکار نہیں چاہتے کہ گلگت بلتستان میں امن امان کی فضا قائم ہو تاکہ یہاں کے عوام کے اندر قومی حقوق کیلئے جو لاوا پک رہی ہے اسے پھٹنے سے بچایا جاسکے۔ اس تمام صورت حال پر بڑے غور خوص کے بعد عوامی ایکشن کمیٹی نے گلگت کے تمام تھانوں میں لوکل انتطامیہ اور بااثر لوگوں کے خلاف ایف آئی آر درج کرنے کا فیصلہ کیا جس میں ہمیں کامیابی ملی اور ہم نے انتطامیہ کو انتباہ کیا کہ کسی بھی شیعہ سُنی کا قتل مخالف مسلک کے خلاف نہیں بلکہ لوکل انتطامیہ اور بااثر سرکاری ذمہ داران کے خلاف درج ہوگا۔ اُس وقت موجودہ حکومت کے لوگ عوامی ایکشن کمیٹی کے مشاورتی میٹنگوں میں باقاعدہ شریک ہوتے تھے چارٹرڈ آف ڈیمانڈ بنانے میں ہمارا ساتھ دیا تھا لیکن جب اُنکی حکومت آئی تو روئے اور مزاج میں تبدیلی آئی جس پرہمیں افسوس ہے۔

اُنہوں کہا کہ آج اگر مقامی حکومت امن امان کا کریڈیٹ لینا چاہئیں تو ہمیں کوئی اعتراض نہیں لیکن عوامی حقوق کی جدوجہد کرنے والوں کے خلاف کریک ڈوان کو روکا جائے، حقوق کیلئے سڑکوں پر نکلنے والوں پر الزامات لگانے کی روش کو ختم کیا جائے یہی ہمارا مطالبہ ہے۔ اگر حکومت اس سلسلے میں عوام کےساتھ کھڑے ہیں تو عوامی ایکشن کمیٹی بھی حکومت کا ساتھ دینے کیلئے تیار ہیں۔

About admin

اپنی رائے کا اظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

*

apental calc