تازہ ترین

سکردو میں پانی کیلئے احتجاج جرم بن گیا؛ آصف ناجی ایڈوکیٹ سمیت دیگروکلاء کے خلاف مقدمہ درج۔

سکردو(ٹی این این) ضلع سکردو میں پانی کی بندش کے خلاف کمشنر آفس کے سامنے احتجاج کرنا جرم بن گیا۔ تفصیلات کے مطابق ضلع سکرد خمبو شغرن کی خواتین پانی کی فراہمی کا مطالبہ لے کر ضلعی انتظامیہ کے دفتر پہنچ گئے لیکن دفتر کے باہر تعینات سیکورٹی اسٹاف نے کمشنر سے ملنے نہیں دیا۔ آصف ناجی ایڈوکیٹ اور دیگر وکلاء کا خواتین کی کمشنر سے ملاقات نہ کرانے کمشنر کے دفتر پر تعینات گارڈ اور آفس بوائے کے ساتھ تلخ کلامی ہوئی جس پر کمشنر نے وکیل ناجی اور دیگر کو گرفتار کرلیا۔ عوامی حلقوں کی جانب سے کہا جارہا ہے کہ اگر تھوڑی سی وقت نکال کر خواتین سے مل لیتے تو معاملہ خوش اسلوبی سے حل ہوسکتا تھا لیکن اُنہوں نے ایسا نہیں کیا۔
پولیس کی جانب سے درج ایف آئی آر کے مطابق ایڈوکیٹ آصف ناجی اور دیگر نے حمید گڑھ کے مقام پر خواتین کو ورغلا کر کمشنر بلتستان آفس کے سامنے جمع کیا اور زبردستی اُن کے دفتر میں گھسنے کی کوشش کی گارڈ کی جانب سے منع پر اُنہوں نے گارڈ کےگالم گلوچ کی۔ پولیس کی جانب سے کار سرکاری میں مداخلت کرنے کے جر م میںآصف ناجی ایڈووکیٹ، ذولفقار علی ایڈووکیٹ اور شاکر ریحان ایڈووکیٹ پر انسداد دہشتگردی کے دفعات 6/7 اور کار سرکار میں مداخلت سمیت فوجداری دفعات شامل ہیں۔ ذرائع کے مطابق پولیس نے آصف ناجی گلگت منتقل کردیا ہے جبکہ ذولفقار اور شاکر ایڈووکیٹ کی ضمانت قبل از گرفتاری کی درخواست پر تین دن کے لئے سماعت ملتوی کردی ہے۔
سوشل میڈیا پر گلگت بلتستان کے وکلاء برادری کی جانب سےگلگت بلتستان میں عوامی حقوق کیلئے آواز اٹھانے اورجدوجہد کرنے والوں کے خلاف اسطرح کے غیر آئینی، غیر قانونی من گھڑتFIR درج کر کے قانون اور انسانیت کو شرما دینے والا واقعہ قرار دیا جارہا ہے۔
دوسری جانب عوامی ایکشن کمیٹی نے یادگار شہداء چوک سکردو پر احتجاج کرکے آصف ناجی سمیت دیگر وکلاء کی گرفتاری کو خلاف قانون اور کمشنر بلتستان کی جانب سے افسر شاہی کی بدترین مثال قرار دیا جارہا ہے۔ عوامی ایکشن کمیٹی بلتستان کے رہنماوں کی جانب سے کمشنر بلتستان کے روئے کو بلتستان کے ماوں بہنوں کی توہین قرار دیکر اُنہیں فوری طور پر بلتستان بدر کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔

About TNN-GB

اپنی رائے کا اظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

*