گلگت بلتستان کے عوام ہار گئی، ویمن ٹریفکنگ میں ملوث جی بی اسمبلی کے اراکین کے اسکینڈلز تین کروڑ روپے میں دب گئے

 اسلام آباد (نیوز ڈیسک) ایک آن لائن جریدے کے مطابق  گلگت بلتستان کے معزز اراکین اسمبلی کی ویمن ٹریفکنگ میں ملوث ہونے والی خبر مکمل طور پر سردخانے میں چلی گئی ہے۔ اس سلسلے میں خطے بھر میں خبر گردش کر رہی ہے کہ مذکورہ اسکینڈل کو منظر عام پر لانے والے صحافی نے تین کروڑ روپے کے عوض خاموشی اختیار کرلی ہے۔ کم و بیش ایک سال قبل ایک نجی جریدے میں دعویٰ کیا گیا تھا کہ جی بی حکومت کے وزیراطلاعات سمیت متعدد اسمبلی اراکین اور جی بی کونسل کے اراکین ویمن ٹریفکنگ کے گھناونے کھیل میں ملوث ہیں۔ انہوں نے ابتدائی طور پر ثبوت بھی منظر عام پر لائے تھے۔ اس کے ردعمل میں صوبائی حکومت نے تحقیقاتی کمیٹی کا ڈھونگ بھی رچایا تھا اور مذکورہ صحافی کو عدالت میں گھسیٹنے کی دھمکیاں بھی دی تھیں۔ ایک عرصہ مذکورہ صحافی اور حکومت کے مابین بیانات کا تبادلہ ہونے کے بعد اچانک دونوں منظر سے یکسر غائب ہوگئے ہیں۔ انگریزی اخبار کے مذکورہ صحافی کے سنگین الزامات کے بعد حکومت کی مجرمانہ خاموشی بھی سوالیہ نشان ہے۔ دوسری طرف ہمارے ذرائع کے پوچھنے پر صحافی نے اس الزام کی مکمل طور پر تردید کی ہے، جس میں بتایا گیا تھا کہ اسے منہ بند رکھنے کے لیے تین کروڑ روپے دیے گئے ہیں۔ ان کا موقف ہے کہ صحافیوں کا کام حقائق کو منظر عام پر لانا ہے، اب ان مجرموں کو سزا دینے کے لیے ریاستی ادارے اور عدالتیں موجود ہیں۔ ان کا کہنا ہے کہ انکا اب بھی وہی موقف جو پہلے روز تھا۔ ان کا دعویٰ ہے کہ اس شرمناک عمل میں جی بی اسمبلی اور کونسل اراکین کے ملوث ہونے کے ناقابل تردید شواہد موجود ہیں۔ اس سلسلے میں جی بی کے عوام کا مطالبہ تھا کہ اگر مذکورہ خبر میں کوئی صداقت نہ ہو تو اسے اچھالنے والے صحافی کو کڑی سے کڑی سزا دی جائے، اگر یہ خبر درست ہے تو اس میں ملوث افراد کو قرار واقعی سزا دی جائے۔ اس معاملے میں نہ اب تک صحافی کے خلاف کوئی کارروائی عمل میں آئی ہے اور نہ شرمناک اسکینڈل میں ملوث جی بی اسمبلی کے اراکین سامنے لائے گئے ہیں۔ گلگت بلتستان کے متعلق تاریخی اور شرمناک واقعے میں خفیہ اداروں اور ریاستی اداروں کی خاموشی نہ صرف سوالیہ نشان ہے بلکہ عوام مشوش ہے کہ بے حیائی کی اس بہتی گنگا میں ایسے افراد بھی کہیں ہاتھ تو نہیں دھو رہے ہیں جن کے خلاف اقدام اٹھانا ناممکن ہو۔

 

About admin

اپنی رائے کا اظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

*

apental calc