وفاقی وزیر امور کشمیر و گلگت بلتستان چوہدری برجیس طاہر نے حقوق گلگت بلتستان کے حوالے سے ایک بار پھر لوری سُنا دی۔

گلگت( نامہ نگار) گلگت میں گلگت بلتستان کونسل کے کیمپ آفس کے افتتاحی تقریب سے سے خطاب کرتے ہوئے برجیس طاہر نے کہا کہ مسلم لیگ ن کی حکومت نے گلگت بلتستان کی آئینی حقوق دینے کا وعدہ کیا ہے اور وفاقی حکومت آئینی کمیٹی حقوق دینے کا وعدہ پورا کریگی اس سلسلے میں آئینی کمیٹی کا اجلاس پندرہ ستمبر کو اسلام آباد میں طلب کیا گیا ہے۔اُنہوں نے مزید کہا کہ ہم جھوٹ کی سیاست نہیں کرتے اور آئینی حقوق کا مسئلہ اپنے دور حکومت میں حل کرینگے ، سی پیک منصوبہ گلگت بلتستان کے عوام کے لئے سب زیادہ فائدہ مند منصوبہ ثابت ہوگا دیامر بھاشا ڈیم گلگت چترال روڈ جیسے بڑے منصوبے سی پیک میں شامل کیا ہے سابق وزیراعظم نواز شریف کی طرف سے گلگت بلتستان کی تعمیر و ترقی کے لئے منظور شدہ منصوبوں پر مکمل عمل درآمد ہوگا اور یہ خطہ معاشی ٹائیگر بننے گا جو لوگ الزام لگاتے تھے کہ گلگت بلتستان سکردو روڈ نہیں بنے گا اب کان کھول کر سن لیں ہم نے گلگت سکردو روڈ پر کام شروع کرایا ہے بلتستان یونیورسٹی بھی قائم کی جا رہی ہے ہم تمام وعدے پورے کر رہے ہیں۔ گلگت بلتستان میں مزید تین اضلاع بنایا ،گلگت بلتستان حکومت وزیر اعلیٰ حفیظ الرحمن کے قیادت میں ترقی کررہا ہے دو سالوں میں یہاں نوکریاں نہیں بکی ہم نے لوٹ کھسوٹ ختم کردیا ہے۔

یاد رہے گلگت بلتستان آئینی اور قانون طور پر تنازعہ کشمیر کا حصہ ہے اور عوامی مطالبے کے باوجود حکومت پاکستان کی جانب سے کبھی بھی یہ نہیں کہا کہ وفاق  مسلہ کشمیر کو رول بیک کرکے اس خطے پانچواں آئینی صوبہ بنانے کا ارادہ رکھتے ہیں۔ کیونکہ ایسا کرنے سے مسلہ کشمیر پر پاکستان کی موقف بین الاقوامی سطح پر کمزور سکتا ہے۔ لہذا اس قسم کی کمیٹیاں فقط عوام کے آنکھوں میں دھول جھوکنے کیلئے بنائی جاتی ہے۔

About admin

اپنی رائے کا اظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

*

apental calc