زہریلی کھچڑی ۔ تحریر: سید ساجد حسین

حالیہ نوں میں گلگت بلتستان سے تعلق رکھنے والے جوانوں کے مابین سوشل میڈیا پہ ایک نئی بحث چھڑ گئی ہے جس کی بنیاد بلتستان کے کچھ جوانوں نے رکھی جن کا مدعیٰ یہ تھا کہ ” بلتستان ” کے ساتھ ناروا سلوک برتا جارہا ہے اور اس کے پیچھے ” گلگت ” کے لوگوں کا ہاتھ ہے ـ
جوانی کے جوش سے لبریز جوانوں نے مختلف طریقوں سے اس معاملے پہ اپنے جذبات کا اظہار کیا جو کہ فطری عمل ہے مگر یہاں چند اہم نکات کا سمجھنا بہت ہی ضروری ہے ـ
یہ بات مسمم ہے کہ تعلیمی سیاسی سماجی اور دیگر معاملات میں بلتستان کو نظر انداز کیا گیا ہے ـ صرف بلتستان کے ساتھ ہی نہیں بلکہ دیامر کے ساتھ بھی مختلف اداروں نے ناروا سلوک جاری رکھا ہوا ہے ـ ایسے موقع پہ ہمیں معاملات کا باریک بینی سے جائزہ لینا ہوگا اور سوچ سمجھ کے اقدامات اٹھانے ہوں گے ـ
ان تمام معاملات کے پیچھے ایک زہریلی کھچڑی پک رہی ہے جس کا سمجھنا بہت ضروری ہے ـ گلگت چونکہ اس خطے کا دارلخلافہ ہے لہٰذا تمام اہم ادارے وہاں قائم ہیں جبکہ ان اداروں میں تعینات عملہ کی اکثریت کا تعلق بھی گلگت سے ہےـ اس کا ہر گز یہ مطلب نہیں ہے کہ وہاں کے لوگ تعصب کرتے ہوں یا اس ناانصافی میں شامل ہوں بلکہ ان مظالم کے پیچھے ان اداروں کے سربراہان کا ہاتھ ہے کہ جن کی ڈوری کہیں اور سے ہلائی جارہی ہے تاکہ جوانوں کو گلگتی بلتی چلاسی اور کوہستانی کے بیچ میں پھنسا کر ان کا دیھان بٹایا جا سکے اور ان کی توجہ بنیادی مسائل سے ہٹا کر اس طرح کے دلدل میں دکیل دیا جاسکے ـ جوان معاشرے کی ریڑھ کی ہڈی کی حیثیت رکھتے ہیں اور ان کا یکجا ہونا اور ظلم کے خلاف متحد جدوجہد کرنا بالائی طبقے کے لئے تباہ کن ثابت ہوسکتا ہے جس کے لئے منظم انداز سے انہیں تقسیم کرنے کے فارمولے پہ عمل درآمد کیا جارہا ہے ـ معاملے کی نزاکت کو سمجھتے ہوئے اخوت کی فضا کو برقرار رکھنا وقت کی اہم ضرورت ہے ـ
جوانوں کو چاہئے کہ وہ ان اداروں یا ” گلگت ” کے عوام کو کوسنے کے بجائے اپنے حلقے کے نامراد نمائندوں کو کوسیں کہ جنہیں عوام نے مینڈیٹ دے کر اسمبلی میں بھیجا ہے اور وہ اسلام آباد اور دیگر شہروں میں رنگولیاں منا رہے ہیں ـ
جب بلتستان کے یا دیامر کے اراکین اسمبلی جی حضوری کرتے ہوئے انگلی پکڑ کر چلیں تو ہمیں یہ حق ہی نہیں پہنچتا کہ ہم کسی اور کو برا بلا کہیں بلکہ اپنے روئیے اور سیاسی لا شعوری پہ ماتم کرنا چاہئے ـ
سید ساجد حسین

About admin

اپنی رائے کا اظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

*

apental calc