چلاس تھور میں ضلعی انتظامیہ کی جانب سے غیرقانونی طور پر جنگلات کی کٹائی کے خلاف کریک ڈاون،لکڑیاں ضبط۔

چلاس(راجہ اشفاق طاہر) مجسٹریٹ درجہ اول،تحصیلدار ہیڈکوارٹر چلاس تنویر احمد،ڈی ایف او دیامر محمد افتخار،آر ایف او تھور سجاد اور ایس ایچ او محمد فقیر تھورکی قیادت میں محکمہ جنگلات اور پولیس کی ٹیم نے گزشتہ روز غیر قانونی طور پر جموگہ تھور سے کھٹوبٹ تھور ڈھلائی کی گئی 1043نگ پر مشتمل سلیپران دیار (8,865تقریباً) لکڑی کو موقع پر باضابطہ طور پر ضبط کرکے ضبطی موس (DHM)بھی ثبت کردیا گیا ہے۔ ڈی ایف او محمد افتخار نے کہا ہے کہ غیر قانونی طور پر ڈھلائی کی گئی لکڑی کے ذمہ داروں کے خلاف تحت ضابطہ فارسٹ ایکٹ کے تحت کاروائی کی جائے گی۔ اُن کا کہنا تھا کہ محکمہ جنگلات کی طرف سے دیامر میں سب سے بڑی کارروائی ہے اور دیامر کے ہر گاؤں میں تحفظ جنگلات کمیٹی بھی عمائدین علاقہ کے طور پر بناکر جنگلات کی غیر قانونی کاٹی کی روک تھام کیلئے کام کررہے ہیں۔

یاد رہے گلگت بلتستان میں جنگلات کی کٹائی میں سب سے ذیادہ مقامی سیاست دان ملوث ہوتے ہیں اور آج تک کسی جگہ سے ضبظ شدہ لکڑیوں کے بارے میں کوئی حساب نہیں کیونکہ لکڑیاں عوام سے ضبظ کرکے سرکاری افیسرز اور سیاست دان اپنے ضروریات کیلئے استعمال یا فروخت کرتے ہیں حکومت کواس طرف بھی توجہ دینے کی ضرورت ہے۔

About admin

اپنی رائے کا اظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

*

apental calc