تازہ ترین

ایس سی او کو گلگت بلتستان کے عوام پر رحم نہیں آیا،عوام نے آرمی چیف کو پُکار لیا۔

سکردو(قاسم قاسمی) گلگت بلتستان اور آذاد کشمیر کیلئے اسپیشل ٹیلی فون اور موبائل سروس فراہم کرنے والا ادارہ اسپیشل کمونیکشن سروس(SCO) جہاں اپنے سروس کے معیاری بنانے میں بُری طرح پھیل ہوچُکی ہے وہیں انٹرنیٹ سروس کی فراہمی کے نام پر غریب عوام کو جیبوں پر ڈاکہ ڈالنا شروع کیا ہوا ہے۔ تفصیلات کے مطابق اسی ادارے کے تحت آذاد کشمیر میں ابھی تک 4G فری ٹرائل سروس جاری ہیں جبکہ گلگت بلتستان میں دو ہفتے کی فری انٹرنیٹ سروس کے بعد روزانہ کی بنیاد پر 30MB کا مفت ڈیٹا شروع کیا ہے جو کہ آج کے اس ترقی یافتہ دور میں دور افتادہ اور نظام سے خالی علاقوں کے عوام کو بیوقف بنانے والی بات ہے اس وجہ سے صارفین میں شدید غم غصہ پایا جاتا ہے۔ سکردو شہر میں عوامی حلقوں کا کہنا ہے کہ گلگت بلتستان کے عوام کے آج کے اس ترقی یافتہ دور میں بھی انٹرنیٹ سروس ایک نئی ایجاد ہے یہی وجہ ہے کہ عوام کو چونکہ 30MB کے بارے میں اگاہی نہیں یہی وجہ ہے کہ روزانہ کئی سو روپیہ نیٹ استعمال کرنے کی چکر میں ضائع ہوجاتے ہیں۔ عوامی حلقوں کا کہنا ہے کہ 30 ایم بی مفت کے بعد 1600 MB انٹرنیٹ کیلئے 500 روپیہ وصول کیا جاتا ہے جبکہ یہی سروس دوسری کمپنیاں 60 سے لیکر 120 روپے میں فراہم کرتے ہیں۔ عوامی حلقوں کا کہنا ہے کہ اس بھی بڑی پریشانی یہ ہے کہ اگر غلطی انٹرنیٹ سم سے کسی کو کال لگ جائے تو وہ سم بلاک ہوجاتے ہیں اور اسے دوبارہ بحال بھی نہیں کیا جاسکتا بلکہ نیا سم خریدنا پڑتا ہے جو کہ عوام کے ساتھ کھلی ذیادتی ہے۔ سکردو کے کچھ سوشل ایکٹوسٹ اور سیاسی رہنماوں سے جب ہم نے رابطہ کیا تو اُنکا کہنا تھا کہ یہ ادارہ گلگت بلتستان کے عوام کو مسلسل بیوقوف بنارہا ہے اور بدقسمتی سے ادارے کے خلاف احتجاج کرنا بھی ایک طرح سے فوج مخالف قرار دیا جاتا ہے۔ اُنکا کہنا تھا کہ آج کے اس جدید دور میں گلگت بلتستان کے عوام کو انٹرنیٹ سے دور رکھنے کی کچھ نہ کچھ تو اہم وجوہات ہیں جس کی پردہ داری کی جارہی ہے اور عوام کو لوریاں سُنا کر سروس درست کرنے کی نوید سُناتے رہتے ہیں۔ سکردو موبائل مارکیٹ کے کچھ دوکانداروں کا اس حوالے سے کہنا تھا کہ دن میں کئی درجن ایسے لوگ آتے ہیں جو کہتے ہیں کہ 20 منٹ انٹرنیٹ استعمال کیا تو موبائل کا بیلنس خالی ہوگیا مگر اس حوالے سے سکردو میں موجود اُنکے آفس میں کمپلئن کرکے کے بھی کوئی شنوائی کرنے والا نہیں۔ عوامی حلقوں نے آرمی چیف سے مطالبہ کیا ہے کہ اس ادارے کے ذمہ داران کے خلاف ایکشن لیں کو موبائل اور ڈی ایس ایل کے نام پر گلگت بلتستان کے عوام کو مسلسل بیوقوف بنا رہے ہیں۔ اور پاکستان کے دیگر موبائل کمپینوں کو موبائل سروس کی طرح اس خطے کے عوام کیلئے انٹرنیٹ سروس کی فراہمی کیلئے اجازت دیں کیونکہ اس وقت دیگر کمپینوں کی راہ میں سب سے بڑی رکاوٹ ایس سی او کا ادارہ ہے۔

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

About TNN-GB

اپنی رائے کا اظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

*