تازہ ترین

گلگت میں پولیس گردی،مقامی اخبار کے دفتر پر دھاوا بول دیا۔

چلاس(پ-ر)گلگت شہر میں پنجاب اور سندھ کی طرح تیسرا راؤ انوار نے جنم لیا,ایس ایچ او ظہور احمد کی نجی صحافتی ادارہ ہمالیہ ٹوڈےے پر دھاوہ بولنا انتہائی افسوسناک ہے, جٹیال پولیس محافظ ہونے کے بجائے پولیس گردی پر اتر آئی ہے,جس کی ہم پرزور مزمت کرتے ہیں, پریس سیکریٹری دیامر پریس کلب کے سیئنر صحافی شفیع اللہ قریشی نے اپنے ایک اخباری بیان میں کہا ہے کہ گزشتہ شب جوٹیال پولیس کی بدمعاشی,بغیر کسی سرچ وارنٹ کے کسی ادارے کو حراساں کرنا معاشرے میں انتہا پسندی کم نہیں ہے, انھوں نے اظہار خیال کرتے ہوئے کہا کہ ایس ایچ او ظہور احمد گلگت بلتستان کا گلو بٹ بنا چاہتا ہے, پنجاب اور سندھ کی طرح گلگت شہر میں راؤ انوار کی پوزیشن لینا اس نیت میں فتور سے کم نہیں ہے,صحافتی ادارے نے حقائق پر مبنی خبر شائع کیا تھا,اسکا انتقام لینا ہر گز قابل قبول نہیں ہے, ایسے کسی صحافتی ادارے کو دبانا صحافت پر کاری ضرب ہیں,اگر سچ کی آواز کو دبانے کی کوشش کی گئی تو پولیس کے خلاف احتجاج پر اتر آیئنگے,انھوں نے آئی جی گلگت بلتستان صابر احمد سے نوٹس لینے کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ ایس ایچ او ظہور احمد کو فوری ٹرانسفر کیا جائے اور واقع کا فوری ازالہ کریں,بصورت دیگر احتجاج کرنے پر مجبور ہونگے۔

About TNN-GB

اپنی رائے کا اظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

*