تازہ ترین

عوامی ایکشن کمیٹی نے پیپلزپارٹی کے الزامات کو مسترد کردیا۔

گلگت (بیوور رپورٹ) گلگت بلتستان میں عوامی ایکشن اور انجمن تاجران نے پُرہجوم پریس کانفرنس کرتے ہوئے پاکستان پیپلرپارٹی سے تعلق رکھنے والے رکن قانون ساز اسمبلی کے الزامات کو مسترد کردیا۔ نگر سے رکن قانون ساز اسمبلی جاوید حسین نے الزام لگایا تھا کہ پارلیمانی کمیٹی کی سفارش کے باوجود عوامی ایکشن کمیٹی نے آئینی حقوق کے مطالبے کی شق کو نکال کر قوم سے غداری کی ہے۔ اس حوالے سے عوامی ایکشن کمیٹی کے ترجمان غلام عباس نے کہا کہ سب سے پہلے اس بات کو سمجھنے کی ضرورت ہے کہ عوامی ایکشن کمیٹی کس قسم کا پلیٹ فارم ہے یہ کوئی سیاسی تنظیم نہیں بلکہ تمام جماعتوں پر مشتمل ایک کمیٹی ہے لہذا گلگت بلتستان کے آئینی حقوق پر ہر پارٹی کا الگ موقف ہے اور یہ کام عوام سے ووٹ لینے والے پارٹیوں کا مینڈیٹ ہے کیونکہ اس وقت کوئی گلگت بلتستان کو آئینی صوبہ دیکھنا چاہتے ہیں کسی کا مطالبہ آذاد کشمیر طرز پر سیٹ کیلئے ہے کوئی عبوری صوبے کی ڈیمانڈ کرتے ہیں تو کوئی موجودہ نظام کو ہی اچھا سمجھتے ہیں ایسے ہم جب تک اس حوالے سے افہمام تفہم پیدا نہ ہو عوامی ایکشن اس پوزیشن میں نہیں کہ اس مسلے پر بات کریں کیونکہ یہ معاملہ خود سیاسی جماعتوں کے درمیان ایک متنازعہ مسلہ ہے۔انہوں نے واضح طور پر کہا کہ ہمارا کوئی الگ ایجنڈا نہیں بلکہ ہر ایشو پر تمام پارٹیوں کے ساتھ ملکر جدوجہد ہمارے منشور کا حصہ ہے لہذا پیپلزپارٹی کے رہنما کا حکومتی زبان میں سیاسی متفقہ پلیٹ فارم عوامی ایکشن کمیٹی پر الزامات قابل افسوس ہیں۔

About Muhamamd

اپنی رائے کا اظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

*