تازہ ترین

زمینی جنت کتی شو کھرمنگ اورعزم ناشاد۔ تحریر: ایس ایس ناصری

یوں تو گلگت بلتستان کو قدرت نے بے تحاشا حسن اور قدرتی نعمات سے مالا مال کیا ہے لیکن اس خطے کے بعض علاقے ایسےہیں جیسے دیکھ کر انسان دھنگ رھ جاتے ہیں اور بےاختیار قدرت کےکرشمے کی تعریف کرنے پر مجبور ہوجاتے ہیں ان قدرتی نعمات اور قدرتی حسن کے سبب بے اختیار زبان پر قر آن مجید کی سورہ رحمٰن کی آیت کاوردکرنا شروع کردیتا ہے جس کا ترجمہ ہے کہ تم اپنے پر ور دگار کی کون کونسی نعمتوںکوجھٹلاؤگےواقعًا گلگت بلتستان کے بعض علاقے اور جہگے ایسےہی ہیں جہاں بندہ پہنچے تو واپسی کو دل نہیں کرتا چاہےوہاں زندگی کی سہولیات موجود ہو یا نہ ہو ان علاقوں میں رہنے اور وقت گزارنے کا ایک الگ مزہ ہے دنیاء اس وقت ایک گلوبل ولیج بں چکی ہے اور اس گلوبل ولیج میں بسنے والے اتنے مصروف ہوگئےہیں کہ کسی کو کسی کی خبرتک نہیں ہوتی ایسے حال میں قدرتی حسن سے مالا مال علاقے یا خطے میں ہر وقت مصروف رہنے والا شخص پہنچے تو وہ خدا کا شکر ادا کرنے کے ساتھ سکوں کی زندگی گزار لیتے ہیں کیونکہ اسطرح کے جہگوں پر نہ آپکوہمیشہ اپنے ساتھ رہنے والی ڈیوائس یعنی موبائل فون تنگ کریگا اور نہ ہی بےہنگم ٹریفک کے شور بس سکوت طاری آپ کا مقدر بن جاتے ہیں اور آپ اس پر خوش ہوکر بیتے لمحوں کوشاہانہ انداز سے گزار لیتے ہیں گلگت بلتستان کے انہی جہگوں میں سے ایک خوبصورت اور دلفریب علاقہ سکردو شہر سے تقریبًا 50کلومیٹر سے زائدزمینی مسافت پر مہدی آباد جس کا پرانہ نام پرکوتہ ہے شاید آپ صاحباں نے سنا ہوگا انہی مہدی آباد نالہ میں مہدی آباد سے بل کھاتی ہوئی کچی سڑکوں پر سفرکرتے ہوئے بارہ سے تیرہ کلومیٹر کے فاصلے پر واقع خوبصورت علاقہ کتی شو کہا جاتا ہے کتی شو یونین کھرمنگ کی بڑی یونین ہے اس یونین کی آبادی تقریباً آٹھ ہزار نفوس ہے اور یہ یونین تقریبًا 25کے لگ بھگ چھوٹے بڑے گاؤں اور 5مواضعات پر مشتمل ہیں اس علاقے کی وجہ تسمیہ کے حوالے سے وہاں کے بزرگ اخوند علی سے گفتگو شنید ہوئی تو انکا کہنا تھا کہ پرانے زمانے میں کھرمنگ کو کرتخشہ کے نام سےلکھا اور پکارا جاتا تھا اسی کے پیش نظر اس علاقے کا نام کتی شو پڑا ہےاس یونین کے آغاز میں جو محلہ یعنی جس سے یہ یونین شروع ہوتاہے کولطروکہا جاتا ہے یونین کتی شو کے دو الگ الگ راستے ہیں ایک راستہ موضع طولتی بروق کی طرف جاتا ہے جبکہ دوسرا راستہ موضع داپاکی طرف جاتا ہے دلچسپ بات یہ ہے کہ کتی شو داپا سطح سمندر سے بارہ ہزار فٹ اونچائی پر ہے اور یہ دنیاء کی بلند تریں میدان سطح مرتفع دیوسائی کے برابر میں ہے یہاں سے دیوسائی ٹاپبمرفو لہ تک زمینی راستہ ہے گرمیوں میں یہ علاقہ جنت سے کم نہیں اور سردیوں میں یہاں زندگی گزارنابھی کسی مصیبت سے کم نہیں ہےداپا کے اکثر وبیشتر محلوں کے باسی سردیوں کے موسم میں یہاں سے نقل مکانی کرتے ہیں اورزمانہ قدیم میں کتی شو نہ صرف مال مویشیوں کے لحاظ سے امیر تریں علاقہ ہے بلکہ کھیتی باڑی کے حوالے سے بھی اپنی مثال آپ ہےماضی میں اس جگہ سے پورےکھرمنگ کیلے اجناس اور غلہ سپلائی کرتے تھے _کتی شو کو یہ بھی اعزاز حاصل ہےکہ 1947-48کی جنگ آزادی گلگت بلتستان کے وقت معرکہ پرکوتہ کے دوراں پرکوتہ کے تمام مرد وزن اور اطفال کو اس علاقے کے لوگوں نے پناہ دی معرکہ پرکوتہ تقریبًا چالیس دن تک جاری رہا اس دوراں اس علاقے کے مردوزن نے نہ صرف مہدی آباد (پرانہ نام پرکتہ)کے باسیوں کو خوش آمدید کہا یہاں تک جنگ آزادی کے مجاھدوں کو نان نفقہ بھی انہی علاقے کے لوگوں نے پہنچادیئے۔یہاں یہ بات بھی قابل زکر ہے کہ1840میں مہتا مینگل نے پرکوتہ سے بارہ نمبرداروں کا انتخاب کرکےبارہ موضوعات میں تعینات کیئے ان میں سے پانچ نمبردار کتی شو یونین کلیے منتخب ہوئے جن میں داپا کے نمبردار حاجی محمد چو، کتی شو کے سلطان احمد، چھٹپہ کے وزیر غلام علی، کولطرو کے وزیر محمد علی اور طولتی بروق کے نمبردار وزیر فیروز تھے لیکن بٹھو دور حکومت میں گلگت بلتستان میں ایف سی آر کے خاتمےکےساتھ نمبرداری نظام کا بھی خاتمہ کیا ۔ماضی میں نمبرداروں اور علمائے کرام کی محفلوں میں بیٹھنے اور ان کے زیر اثر رہنے والے کتی شو کے مردوزن مہمان نوازی اور خودداری کے لحاظ سے دوسروں کیلیے قابل تقلید ہے۔یہاں کے لوگ اپنے علاقے میں آنے والے مقامی وغیر مقامی مہمانوں کو دل کھول کر اپنے علاقے میں اھلاًو سھلاً مرحباً کہتے ہیں۔اور ان کے تواضع میں لگ جاتے ہیں ۔کتی شو کے ابتدائی محلہ سے متصل چھوٹی سی گاؤں شمائل جن کا اصل اور قدیم نام شمویول ہے جو یہاں مشروم کی کثرت کی وجہ سے ہے یوں تو بلتستان کے اکثر محلوں اور گاؤں کے نام بلتی زبان میں ملے گا اسی طرح اس گاؤں کا نام بھی زمانہ قدیم میں بلتی زبان کے دو ناموں سے ملکر شمو یول یعنی بلتی زباں میں شمو کا مطلب مشروم اور یول کا مطلب گاؤں یا علاقہ کے ہے مگر موجودہ ترقیافتہ دور میں اختصار پر اکتفاء کرتے ہوئے اس گاؤں کا نام شمائل سے پکار نے لگے۔اس گاؤں میں ایک پں بجلی گھر موجود ہے جس سے نہ صرف علاقہ کتی شو کو بجلی فراہم ہوتی ہےبلکہ مہدی آباد اور ملحقہ ایریاز کیلے بھی بجلی ترسیل کی جاتی ہے۔بجلی کے حوالے سے ایک خاص بات کتی شو کی یہ بھی ہےکہ اس علاقے کے اکژ چھوٹے بڑے محلوں میں ایک این جی او کی تعاون سے مائیکرو ھائیڈرو پاور کا نظام متعارف کیا گیا ہے جس سے سردیوں میں اس علاقے کے لوگ مستفید ہوتے ہیں ۔کتی شو کےایک موضع طولتی بروق کے دوگاؤں بلتی کھر اور برق کھر کی خوبصرتی اس علاقے کی حسن کو مزید چار چاند لگا دیتے ہیں ویسے تو ان محلوں کے نام سے ایسا لگتا ہے کہ ماضی میں یا موجدہ دور میں یہاں کھر (قلعہ) مجود ہے در اصل ایسی کوئی کہانی نہیں صرف اور صرف اونچائی پر ہونے کی وجہ سے اسکی ہیت قلعہ جیسی ہے اسی لیے بلتی کھر اور بروق کھر سے تشبیہ دیتے ہیں اس موضع کی ایک اور خاص بات یہ ہے کہ یہاں ایک خوبصورت ٹیلہ موجود ہے جیسے مویو ٹوق کہا جاتا ہے اس ٹیلے پر پہنچنے کے بعد ایسا محسوس ہوتا ہے کہ جس نے سوئزر لینڈ دیکھا ہو وہ اس کی بیوٹی کوبھول بیٹھیگا ۔تر قیاتی کاموں کے حوالے اگر اس علاقے کا جائزہ لیا جائے تو یہ کہنا غلط نہ ہوگا کہ اس علاقے کے تمام محلوں تک چاہے وہ چھوٹے ہو یا بڑے لنکن روڈ موجود ہیں ۔اس علاقے میں لڑکے اور لڑکیوں کیلے تعلیمی ادارے موجود ہیں صحت کے حوالے سے مراکز قائم ہیں.مسلکی اعتبار سے اگر بلتستان کے دیگر وادیوں سےنموازنہ کریں تو یہاں صرف اہل تشیع کے علاوہ اہلسنت ،نوربخشیہ اور دیکر مسلک کے ایک گھرانہ تک نہیں اسی طرح زبان کےباعتبار سے بھی یہاں خالص بلتی بولی جاتی ہے جبکہ سیاسی اعتبار سے یہاں کسی خاص پارٹی کی اکثریت نہیں البتہ یہاں کے لوگ شخصی اعتبار سے اپنا حق رائے دہی استعمال کرتے ہیں موجودہ دور میں اس علاقے سے منتخب نمائندہ گلگت بلتستان کے سپیکر حاجی فدا محمد ناشاد ہیں جن کا یہ عزم ہے کہ اس علاقے کی عوام کو ان کے گھر کے دھلیز پر زندگی کی وہ تمام سہولیات بہم پہنچائیں جو ان کا بنیادی حق ہے۔ سال میں کم از کم دو مرتبہ اپنی تمام تر مصروفیات سے وقت نکال کر اس علاقے کےلوگوں کے مسائل جاننے اور ان کے حل کیلے انہی علاقے کے سرکردگاں سے صلاح و مشورہ کرنے کیلے دورہ کرتے ہیں اور مسائل کی حل کیلے جستجو کرتے ہیں ۔موجودہ گلگت بلتستان کی حکومت نے کھرمنگ کو ضلع کا درجہ دینے کے بعد اب علاقہ کتی شو سکردو حلقہ نمبر تیں کا حصہ نہیں رہے گااور یہ حلقہ بندی کے لحاظ سے ضلع کھرمنگ کا حصہ ہوگا۔لیکن حاجی فدا محمد ناشاد اس عزم کا اظہار کر رہے ہیں کہ کتی شو حلقہ نمبر تیں کا حصہ رہے یا نہ رہے یہاں کے عوام کا مسائل حل کرنے میں کبھی بھی لیت ولعل سے کام نہیں لیں گے۔اور ان کے مسائل حل کرنے کیلے دن رات کام کرتے رہیں گے۔کتی شو کے قدرتی حسن وجمال قدرتی نعمات اور دیگر وسائل پر سیرو بحث گفتگو کے بعد یہاں کے خوددار لوگوں کو درپیش مسائل کا بھی زکر ضروری سمجھتا ہوں تاکہ یہاں سے منتخب شدہ نمائندہ کے علاوہ باقی صاحباں اقتدار اس جنت نذیر علاقے کے باسیوں پر ترس کھاتے ہوئے ان کے مسائل کے حل کیلے کوئی اقدامات کرے۔گرمیوں کے چھے مہینے جس طرح پہلے زکرکیا یہ علاقہ جنت ہے تو سردیوں کے سیزن اس علاقے کے لوگوں کیلے جہنم سے بھی کم نہیں ۔شدید برف باری کے باعث یہاں کی سڑک بند ہوجاتی ہے لیکن لوگ اپنے لیے اشیاء خوردنوش سڑکیں بند ہونے سے قبل اسٹاک کرلیتے ہیں لیکن بعض اوقات سڑکیں بند ہونے سے نہ صرف کھانے پینے کی اشیاء ناپید ہوجاتے ہیں یہاں تک علاقے میں کوئی بیمار پڑ جائے تو انہیں مہدی آباد یا ڈسٹرکٹ ہیڈ کوارٹر ہسپتال سکردو لانے تک دم توڑ جاتے ہیں ماضی میں کئی افراد طبی سہولیات نہ ملنے کے باعث زندگی کی بازی ہارچکی ہے۔اس علاقے کا دوسرا اہم مسئلہ مواصلات کا ہے آج کی اس ترقیافتہ دور میں مواصلات جیسی نعمت اس علاقے کے عوام کیلے خواب بن چکی ہے اس علاقے کے زیادہ تر لوگ بغرض روزگار ملک کے مختلف شہروں میں مقیم ہونے کے ساتھ بیرون ملک میں بھی ایک کثیرتعداد میں ملازمت کر رہے ہیں عرصہ کئی سالوں سے دیار غیر میں ہونے سے وہ چاہتے ہیں کہ وہ اپنوں سے بات کرے اپنوں کی خیرو عافیت دریافت کرے لیکن علاقے میں ٹیلی مواصلات کی عدم فراہمی سے مایوسی کے سواء انکے حصّے میں کچھ نہیں آتااور وہ اپنوں کی آواز کو ترستے ہوئے وقت گزاردیتے ہیں لیکن عوامی نمائندہ سپیکر جی بی اسمبلی انہیں مایوسی سے نکالنے کیلے بھی پرسر پیکار ہیں اور اس علاقے کی عوام کے دیرینہ مسئلہ کو حل کرنے کیلے ایس سی او والوں سے بات کرکے ٹیلی مواصلات کو یقینی بنارہی ہے اور سال 2018اس علاقے کی عوام کیلے نوید ِلیکر آئیگا اور ان کی خوابوں کو تعمیر ملے گا ۔

  • 3
  •  
  •  
  •  
  •  
    3
    Shares
  •  
    3
    Shares
  • 3
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

About admin

اپنی رائے کا اظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

*