تازہ ترین

ایکٹ کے نام پر مبصری نامنظور،یو این کے قراداد13 اگست 1948 کی روشنی میں حقوق دیا جائے۔ اپوزیشن لیڈر

اسلام آباد(ٹی این این) گلگت بلتستان قانون ساز اسمبلی میں قائد حزب اختلاف کپٹن ریٹائرد محمد شفیع نے وفاقی وزیر امور کشمیر کا گلگت بلتستان کے حوالے سے بیان کو مسترد کردیا۔ تحریر نیوز کو خصوصی انٹرویو میں اُنہوں نے وفاقی وزیر کو گلگت بلتستان اور مسلہ کشمیر کے حوالے سے لاعلم قرار دے دیا۔ اُنکا کہنا تھا کہ گلگت بلتستان کے عوام کی قسمت کا فیصلہ ایک غیر منتخب وزیر نے نہیں بلکہ یہاں کے عوام اور عوامی نمائندوں نے کرنا ہے ۔ اُنکا کہنا تھا کہ علی امین گنڈا پور گلگت بلتستان کو ایکٹ آف پارلمینٹ کے تحت حقوق دینے کا وعدہ جعل سازی اور یہاں کے عوام کے ساتھ دھوکہ اور فریب ہے۔ اُنکا مزید کہنا تھا کہ آئین پاکستان میں ترمیم کئے بغیر گلگت بلتستان کو کیسے ایکٹ دیا جائے گا جبکہ گلگت بلتستان اُس آئین کا حصہ ہی نہیں۔ ایک سوال کے حواب میں اُنہوں نے کہا کہ وفاق اگر گلگت بلتستان کو آئین میں ترمیم کرکے مسلہ کشمیر کی حل تک کیلئے مقبوضہ کشمیر کی طرز پر صوبہ نہیں بناسکتے تو گلگت بلتستان کے حوالے سے اقوام متحدہ کے قراداد میںمن عن عمل کرتے ہوئے 13 اگست 1948 کے قراداد کی روشنی میں لوکل اتھارٹی کے قیام کو یقینی بنائیں گلگت بلتستان اب مزید کسی بھی قسم کے مبصری کا متحمل نہیں اگر ایسا کیا تو احتجاج ہمارے عوام کا جمہوری حق ہے۔ اُنکا زمزید کہنا تھا کہ وزیر اعلیٰ حفیظ ایک سازش کے تحت اسمبلی میں جھگڑے کرکے لینڈریفارمز کمیشن پر بحث ہونے نہیں دے رہا یہی وجہ ہے اُنہوں نے خالصہ کے نام پر یہاں کے عوامی زمینوں کی بندربانٹ کی ہوئی ہے جسکا اُنہیں حساب دینا ہوگا۔ کپٹن شفیع نے سٹیٹ سبجیکٹ کی خلاف ورزیوں کو روکنے کے حوالے سے مطالبہ کرتے ہوئے بتایا کہ آج نہیں تو کل گلگت بلتستان میں سٹیٹ سبجیکٹ کی خلاف ورزیوں کو روکنا ہوگا ایسا کرنے کی صورت میں رائے شماری کی صورت میں پاکستان کیلئے مسائل پیدا ہوسکتا ہے۔ اُنہوں نے کہا کہ گلگت بلتستان میں اس وقت سسٹم نہ ہونے کی وجہ سے بیورکریسی کی حکومت ہے اور اسلام آباد سے آئے ہوئے بیورکریٹ گلگت بلتستان کے عوام نمائندوں کی بات نہیں سُنتے یہ ہمارے لئے لمحہ فکریہ ہے۔خالصہ سرکار کے نام پر عوامی زمینوں کو سرکاری استعمال میں لانے کے حوالے سے اُنہوں نے بتایا کہ گلگت بلتستان میں ایک انچ بھی خالصہ نہیں بلکہ یہاں کی تمام زمینیں یہاں کے عوام کی ملکیت ہے اور عوام سے پوچھے بغیر حکومت ایک انچ زمین بھی نہیں لے سکتا۔

  • 81
  •  
  •  
  •  
  •  
    81
    Shares
  •  
    81
    Shares
  • 81
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

About TNN-GB

اپنی رائے کا اظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

*