تازہ ترین

ضلع نگر انتظامیہ نے سرکاری اداروں کے سربراہان کوصحافیوں سے مکمل تعاون کیلئے خط لکھ دیا۔

نگر ( اقبال راجوا) ضلع نگر کی تعمیر و ترقی کے لئے ضلعی اداروں کا فعال کردار نہایت لازمی ہے ، اس مقصد کے حصول کے لئے اداروں کے سربراہان کو صحافیوں سے مکمل تعاون کے لئے خط لکھ کر ہدایات جاری کی جائیں گی۔ ڈپٹی کمشنر نگر کمال الدین قمر کا نگر کے صحافیوں سے گفتگو۔ اپنے دفتر میں صحافیوں سے بات چیت کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ ضلع نگر میں تمام سرکاری ادارے اپنی اپنی حدود میں کام جاری رکھے ہوئے ہیں ۔واٹر منیجمنٹ کے ادارہ کو ابھی تک فعال نہیں کیا جا سکا ہے جس کو بہت جلد فعال کرنے کی بھر پور کوشش کر رہے ہیں ۔ ڈپٹی کمشنر نگر کی معلومات تک رسائی کے حوالے سے صحافیوں کو یقین دہانی کرادی کہ ہر ادارے کے سربراہ کو صافیوں سے ضروری معلومات کی فراہمی کے لئے ہدیات پر مبنی لیٹر جاری کیا جائے گا۔ پریس کلب کی تعمیر کے حوالے دپٹی کمشنر نے یقین دہانی کرا دی کی پریس کلب کا قیام انتہایی ضروری ہے جس کے لئے ڈپٹی کمشنر دفتر کے حدود میں دفاتر کی تعمیرات مکمل ہونے کے بعد دفتر قائم کیا جائے گا۔فی الحال دفتر کے لئے فرنیچر و دیگر سامان کے لئے ایک پراجیکٹ رکھتے ہیں ۔ ڈپٹی کمشنر نے سوشل ویلفئیر کے دفتر کے حوالے سے بتایا کہ ادارے کے دفتر کے لئے مکان کی ضرورت پوری کر لی جائے گی جس کے بعد اس ادارے کا کام بھی شروع ہوگا اور لوگوں کو اس ادارے سے بھی بہت فائدہ مل جا ئیگا۔ صافیوں نے ڈپٹی کمشنر کو مختلف سماجی مسائل کی بھی نشاندہی کی جس پر ڈپٹی کمشنر نے مسائل کے حل کی یقین دہانی کرادی۔ ضلع نگر سے تعلق رکھنے والے صحافیوں نے ڈپٹی کمشنر نگر کو مکمل اعتماد لاتے ہوئے کہا کہ صحافت ایک مقدس پیشہ ہے اس کے تقدس کو برقرار رکھنے کے لئے زمہ دارانہ کردار ادا کر رہے ہیں ۔چونکہ سرزمین نگر سی پیک پر ایک اہم ترین مقام پر واقع ہے اس لئے ضلع نگر کی صحافیوں کو بہت زیادہ زمہ داری کا احساس ہوتا ہے جس کے باعث علاقے کے مسائل سمیت ،تہذیب وتمدن ،ثقافت اور مذہبی اور دیگر روایات بارے میں نہایت احتیاط سے کام کرنا پڑ رہا ہے ۔ نگر میں صحافت ایک سماجی خدمت سمجھی جاتی ہے اس لئے یہاں کی صحافت کا نداز بھی ویسا ہی ہے۔

  • 2
  •  
  •  
  •  
  •  
    2
    Shares
  •  
    2
    Shares
  • 2
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

About TNN-GB

اپنی رائے کا اظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

*