تازہ ترین

بھارتی آئین کاجموں کشمیر میں نفاذ غیر قانونی ہے،جموں وکشمیر ہائی کورٹ میں پٹیشن دائر۔

سری نگر(کشمیر میڈیا سروس/ٹی این این)بھارتی قوانین کو بھارتی صدارتی حکم نامے کے ذریعے مقبوضہ کشمیر میں نفاذ کو جموں وکشمیر ہائی کورٹ میں چیلنج کر دیا گیا ہے۔جموں وکشمیر ہائی کورٹ بار ایسوسی ایشن کے صدر ایڈوکیٹ میاں عبدالقیوم نے ایک پٹیشن عدالت میں دائر کر دی ہے۔پٹیشن میں کہا گیا ہے کہ بھارتی وزارت داخلہ نے28فروری 2019کو ریاستی حکومت اور ریاستی آئین کے1954کے حکم نامہ میں ترمیم کی تجویز کی منظوری دی۔ یہ اقوام بھارتی آئین کی دفعہ356کی صریحا خلاف ورزی ہے ۔ اس اقدام کے بعد بھارتی صدارتی حکم نامے کے زریعےبھارتی آئین کی77ویں ترمیمی ایکٹ1995اور ایکٹ103 کو جموں کشمیر میں نافذ کیا گیا۔
عرضی میں اس حکم نامہ کو غیر آئینی قرار دیتے ہوئے کہا گیا ہے کہ بھارتی آئین زبردستی جموں کشمیر میں نافذ نہیں ہو سکتا ۔ اس کا اختیار دفعہ370کے تحت ریاست کو حاصل ہے۔ ریاستی آئین میں بھارتی قوانین کے نفاذ کا طریقہ کار موجود ہے۔بھارتی آئین کی دفعہ370کے تحت ریاستی حکومت کا مطلب مہاراجہ یا صدر ریاست ہے۔ مہاراجہ یا صدر ریاست نے وزرا کی مشاورت کے بعد فیصلہ کرنا ہے ۔ ریاست میں عوام کی منتخب حکومت موجود نہیں۔ گورنر بھارتی حکومت کا نمائندہ ہے ایسے میں بھارتی صدارتی حکم نامہ غیر قانونی ہے

  • 11
  •  
  •  
  •  
  •  
    11
    Shares
  •  
    11
    Shares
  • 11
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

About TNN-GB

اپنی رائے کا اظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

*