تازہ ترین

گلگت بلتستان میں پنجاب سے زیادہ کرپشن ہے اور ممبران اسمبلی کرپٹ عناصر کی پشت پناہی کرتے ہیں۔ سید عباس کاظمی

سکردو(نامہ نگار)پاکستان تحریک انصاف کی سینیر ممبر سید محمد عباس کاظمی نے جی بی اسمبلی میں ممبران کے سفری الاونس میں اضافے کی قراداد ی مخالفت کرکہا ہے کہ گلگت بلتستان کی قانون ساز اسمبلی کے انتخابات کے موقع پر ہمارتے ہوے کہا ہے کہ ہمارے یہ ممبران انتخابات کے دنوں میںقوم کے آگے بچھ بچھ جاتے ہیں اور کہتے ہیں کہ ہمارا ایک ہی مقصدہے اور وہ آپ غریبوں کی خدمت کرنا اور ٓپ کے حقوق دلوانا ہے۔ لیکن انتخابات جیتنے اور اسمبلی میں بیٹھنے کے بعد غریبوں کے نمائندے اس طرح بدل جاتے ہیں جیسا نہ ہی ان کا اپنے ووٹروں کی مشکلات اورغربت سے انہیں تعلق ہے اور نہ انہیں کیے ہوے وعدے یاد رہتے ہیں ۔ ان کے حلقوں میں جو تھوڑا بہت ترقیاتی سکیمیں وہ حکومت کی پالیسیوں کا تسلسل ہوتے ہیں ۔اور ان سے بھی یہ ممبران کسی نہ کسی صورت میں مفادلیے بغیر نہیں چھوڑتے ۔ گلگت بلتستان اسمبلی کے ممبران کا اگر پنچاب سے موازنہ کریں توپنجاب جوکہ وفاق کا سب سے امیر ترین اور کرپٹ ترین صوبہ ہے ان سے زیادہ گلگت بلتستان میں کرپشن ہے اور آج تک ایک کرپٹ سرکاری ملازم پکڑا نہیں گیا کیونکہ ان تمام کرپٹ عناصر کی پشت پناہی یہی ممبران کرتے ہیں ۔ اگر کبھی کوئی ترقیاتی سکیم انہوں نے لایا بھی تو ہ غریب عوام کے لیے نہیں بلکہ اپنے انتخاب کے تسلسل کے لیے لاتے ہیں۔جی بی اسمبلی کے اراکین یہاں کی اقتصادی حالات اور ان کی کارکردگی کے حوالے سے پہلے ہی زیادہ تنخواہیں او ر مراعات لے رہے ہیں۔اب حال ہی میں اسمبلی میں ان کی ٹی اے ڈی اے میں اضافہ کی قرارداد یہاں کے غریب عوام پر بہت بڑا بوجھ ہے جس کی ہم مذمت کرتے ہیں۔جی بی میں موجودہ اسمبلی اورحکومت کی کی کارکردگی یہ ہے کہ جس ترقیاتی سکیم جس کو ہمارے پاک افواج کی تاکید پروفاقی حکومت نے منظور کیا اور فنڈ دیا وہ بھی اپنے کمالات میں شامل کرتے ہیں اس کی بہترین مثال شاہراہ قراقرم سے سکردو تک کی سڑک کی توسیع اور مرمت ہے ۔اس کے علاوہ بلتستان میں چھومیک پل کی تعمیر ا و ر اس کے سامنے دریاے سندھ کے پار میدان جو وقتا فوقتا دریایے سندھ کی تباہ کن سیلاب کی زد میں رہتا ہے وہاںنیا شہر بسانے کے اعلانات اس حکومت کی بدترین کرپشن کے واضح ثبوت ہیں ۔ایسے بدترین کرپشن اور منفی کارکردگی کے باو جود ممبران اسمبلی کے اخراجات سفر کو بڑھا نا یہاں کے غریب لوگوں کے ساتھ بہت بڑی زیادتی ہے۔ عباس کاظمی نے وزیر امورکشمیر و گلگت بلتستان‘ چیف سیکریٹری اور اکاونٹنٹ جنرل گلگت بلتستان سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ جی بی اسمبلی کے اس قرارداد کی بنیاد منظوری کیلیے ان کے پاس آیے اسے نا منظورکریںتاکہ یہاں کیے غریب عوام پر ان ممبران کے اخراجات کا مزید بوجھ نہ پڑے ۔ عباس کاظمی نے کہا ہے کہ اس نے گلگت بلتستان کے لیے پارٹی مینی فیسٹوایک پیکیج کی صورت میں بناکر وزیر اعظم عمران خان صاحب کو اس پرغور کرنے کے لیے بھیج دیا ہے ۔ اگر عمران خان ساحب نے اس کے نصف سفاشات اور موجودہ نظام میں تبدیلی کی منظوری دی تو انشاء اللہ جی بی اسمبلی کے اگلے انتخابات میں پی ٹی آئی کو بہت بڑی اکثریت حاصل ہوگی اور ان پروگراموں پر بڑی سنجیدگی اورتیزی سے عمل کیا جایے گا اور دنیا د یکھے گی کہ گلگت بلتستان میں کتنی جلدی کرپشن میں ملوث عوامی نمائندوں اور ترقیاتی محکمہ جات کے کرپٹ افسران کو کس طرح قانون کے شکنجے میں لایا جایے گا۔اور عوامی سطح پر کتنی تیزی سے ترقی ہوگی۔

  •  
  • 31
  •  
  •  
  •  
  •  
    31
    Shares

About TNN-ISB

اپنی رائے کا اظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

*