تازہ ترین

شگر سکردو روڈ کی تعمیر میں بے ضابطگیوں اور کنٹریکٹر کو کھلی چھوٹ کا انکشاف۔

شگر(تحریر نیوز نیٹ ورک)مجلس وحدت المسلمین شگر کے رہنماء محمد ظہیر عباس نے کہا ہے کہ کڑوروں روپے کی لاگت سے تعمیر ہونے والے شگر تا سکردو نئی شاہراہ میں شدید بے ضابطگیاں پائی جانے کی شکایات موصول ہورہے ہیں جبکہ محکمہ تعمیرات عامہ شگر کی جانب سے مسلسل کنٹریکٹر کو کھلی چھوٹ سے عوام میں شدید یشویش پائی جاتی ہے۔انہوں نے کہا کہ اس شاہراہ میں جگہ جگہ موڑ کی بھرمار نے روڈ کی افادیت کو ہی ختم کردیا گیا ہے۔انہوں نے کہا کہ یہ روڈ جس کے لیے حکومت نے کروڑوں روپے مختص کیے ہیں اس سڑک کی کل لمبائی تقریباً 17 کلو میٹر اور مختص رقم تقریبا 20 کروڑ سے زائد ہے اتنی بھاری رقم مختص ہونے کے باوجود سڑک کی چوڑائی کو صرف 22فٹ رکھی گئی جو کہ اس سڑک کی اہمیت کے اعتبار سے نہایت کم ہیں علاقہ شگر جوکہ سیاحت کے اعتبار سے پورے گلگت بلتستان میں امتیازی حیثیت رکھتا ہے دنیا کے دوسری بلند چوٹی k-2سمیت آٹھ ہزار سے بلند 4 چوٹیوں اور سات ہزار میٹر بلند 30 سے زائد چوٹیاں دنیا کے تین بڑے گلیشئرز aاور بے حد خوبصورت اور تاریخی مقامات کو دیکھنے کے لیے ہزاروں سیاح شگر کا رخ کرتے ہیں اس کے علاوہ شگر کی آبادی ایک لاکھ کے قریب ہوچکی ہے ان تمام وجوہات کی بنیاد پر یہ سڑک سکردو ہیڈ کوارٹر اور ایئر پورٹ سے کم فاصلے کی بنیاد پر مستقبل میں نہایت اہمیت کا حامل ہوگا اس لیے اس سڑک کو شاہراہ کی طرز پر کم از کم 50 فٹ چوڑا ہونی چاہیے سڑک پر موڑ کم سے کم ہونی چاہیے یہ پوری سڑک خالصہ سرکار پر تعمیر ہورہی ہے اور جتنا چوڑا کرے معاوضہ دینا نہیں پڑتاتاہم محکمہ تعمیرات عامہ شگر کی جانب سے عوام کے بجائے ٹھیکیداروں کو مفادات کا خیال رکھا ہوا نظر آتا ہے ۔ انہوں نے ضلعی انتظامیہ اور محکمہ تعمیرات عامہ کے حکام سے خبردار کیا ہے کہ وہ فوری طور روڈ کی تعمیر بے ضابطگیوں کا نوٹس لیں اور روڈ پر موڑ کو ختم کرکے چوڑھائی کو بڑھائیں بصورت دیگر عوام شدید احتجاج کیلئے سڑکوں پر نکلنے پر مجبور ہوں گے۔

  •  
  • 2
  •  
  •  
  •  
  •  
    2
    Shares

About TNN-ISB

اپنی رائے کا اظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

*