تازہ ترین

وزیراعظم عمران خان نے نیا پاکستان ہاوسنگ اتھارٹی کا اعلان کردیا،غریب آدمی اولین ترجیح۔

اسلام آباد(تحریر نیوز نیٹ ورک) اسلام آباد میں پریس کرتے ہوئےہ وزیراعظم عمران خان نے نیاپاکستان ہاؤسنگ اتھارٹی کے قیام کا اعلان کرتے ہوئے کہا اتھارٹی میں کئی ادارےشامل ہوں گے اور سربراہی خو دکروں گا، نیا پاکستان ہاؤسنگ اتھارٹی ون ونڈآپریشن فراہم کرے گی، اتھارٹی بننےتک17ممبران کی ٹاسک فورس بنارہےہیں۔
،وزیراعظم عمران خان انھوں نے مزید کہا کہ لینڈبینک کاقیام عمل میں لایاجارہاہے، صوبائی حکومتوں،لوکل باڈیزکوبھی شامل کیاجائےگا، ملک بھرمیں کچی آبادیوں سےمتعلق ڈیٹاجمع کررہےہیں، ایک ماڈل کےتحت کچی آبادی والوں کوحقوق دیں گے، کچی آبادیوں میں بڑی عمارتیں بناکرسہولتیں فراہم کریں گے۔
وزیرزعظم کا کہنا تھا کہ نادراسےمل کرگھربنانےسےڈیٹاجمع کیاجائےگا، ابتدائی سروےکرکےلوگوں سےرائےطلب کریں گے، لوگوں کی رائے جاننے کے بعد کنسٹرکشن شروع کریں گے۔انھوں نے کہا کہ دووجوہات کی وجہ سےملک میں کنسٹرکشن انڈسٹری ٹیک آف نہ کرسکی، فنانشل ماڈل نہ ہونےکی وجہ سےکنسٹرکشن انڈسٹری پریشان تھی، نیشنل فنانشل ریگولیٹری باڈی کاقیام عمل میں لایاجارہاہے، کنسٹرکشن انڈسٹری کےراستےمیں لیگل رکاوٹیں دورکرینگے۔ اُنہوں نے کہنا کہ حکومت پہلے مرحلے میں چاروں صوبوں سمیت گلگت بلتستان میں پائلٹ پروجیکٹ شروع کرے گی ، صوبائی حکومتوں کی رضامندی سے ایک ایک ضلع کا انتخاب کیا جائے گا۔ پائلٹ پروجیکٹ بیک وقت چاروں صوبوں اورگلگت میں شروع کیا جائے گا، جس کے لئے رجسٹریشن فارم جاری کئے جائیں گے اور نادراکی مددسےفارم تیاری کی معمولی قیمت وصول کی جائے گی۔ حکومتی پالیسی کے تحت بڑی شاہراہوں کے اردگرد نئے شہر آباد ہوں گے جبکہ ملائیشین ماڈل کے گھر تعمیر کرنے کی تجویز کی گئی ہے،پالیسی سےاربوں ڈالرکی سرمایہ کاری پاکستان آئے گی۔ ذرائع کے مطابق گھروں کی تقسیم غربت کی لکیر سے نیچے افراد میں ہوگی ، غریب شہریوں کو بھی 15 سے 20 سال کی اقساط پر گھر ملیں گے، پالیسی کے تحت ملک بھر میں 3،5اور7مرلے کے گھر بنائے جائیں گے۔چھوٹا گھر 2 کمروں پر مشتمل ہوگا، جس کی قیمت 15 لاکھ روپے تک رکھنے کا امکان ہے۔
وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ ملک کو تاریخ کے سب سے بڑے کرنٹ اکاؤنٹ خسارے کا سامنا ہے ، یہ کرپٹ لیڈرز کو برداشت کرنے کی قیمت ہے۔وزیراعظم عمران خان نے تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ملکی معیشت کو خسارے سے نکالنے کے دو راستے ہیں، ایک دوسرے ملکوں سے معاونت اور دوسرا آئی ایم ایف سے قرضہ لینا ہے، کرپشن اور منی لانڈرنگ نے ملک کا ایسا حال کر دیا ہے،ملکی قرضہ 6 ہزار ارب سے 30 ہزار ارب تک پہنچ گیاہے ۔
وزیراعظم کا کہنا تھا کہ حکومت ملک و عوام کیلئے اہم فیصلے لے رہی ہے ، تحریک انصاف کی حکومت کے اثرات 6ماہ کے بعد آنا شروع ہوں گے۔وزیراعظم کا کہنا تھا کہ ہمارا ٹارگٹ 50لاکھ گھر کا ہے ، کم تنخواہ والے لوگوں کو گھر دینے کا سوچ رہے ہیں ، 40انڈسٹریز اس ہاؤسنگ اسکیم سے منسلک ہیں،اس سے روزگار بھی ملے گا، پاکستان میں 0.25فیصد لوگ قرضہ لے کر گھر بناتے ہیں۔ انھوں نے کہا کہ ہماری اصلاحات کے اثرات چھ ماہ بعد نظرآئیں گے، 10سے20ارب ڈالرکاشارٹ فال ہے، ہم نے طے کیا تھا آئی ایم ایف اور دوست ممالک کی مدد لی جائے گی۔

  •  
  • 3
  •  
  •  
  •  
  •  
    3
    Shares

About TNN-ISB

اپنی رائے کا اظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

*