تازہ ترین

دیامر کے بعد گلگت میں دہشتگردوں کا پولیس چوکی پر حملہ کئی شہید، وزیر اعلیٰ پر سوال اُٹھ گیا۔

گلگت(نامہ نگار خصوصی) دیامر میں دہشتگردوں کی جانب سے اسکولوں پر حملے کے بعد گلگت بلتستان میں امن امان کا صورت حال مخدوش، مسلم لیگ نون کی حکومت کا امن قائم کرنے کے تمام تر دعوے دھرے رہ گئے۔ تفصیلات کے مطابق رات گئے کے سیاحتی مقام کارگاہ جوت پولیس چوکی پر دہشتگردوں کا حملہ کردیا۔ دہشتگردوں کے حملے تازہ حملے میں میں 3 پولیس اہلکار جاںشہید جبکہ 2 اہلکار زخمی ہونے کی اطلاع ہے،پولیس کی جوابی کارروائی سے 2 دہشتگرد ہلاک ہوئے۔ حملے کی اطلاع ملتے ہی زخمیوں کو ریسکو ٹیموں نے فورا پہنچ کر ہسپتال منتقل کر دیا۔۔پولیس کے مطابق ہلاک ہونے والے دہشت گرد دیامیر کے اسکولوں پر حملوں میں ملوث تھے،، ذرائع کے مطابق 8 سے 10 دہشتگردوں نے پولیس چوکی پر حملہ کیا اور اندھیرے کا فایدہ اٹھاتے ہویے فرار ہونے میں کامیاب ہو گئے۔ کارگاہ حملے کے بعدسوشل میڈیا پر حفیظ الرحمن کی کارکردگی پر لوگ سوال اُٹھا رہے ہیں اور کہا جارہا ہے کہ وزیر اعلیٰ دہشت گردوں کے خلاف آپریشن کی مخالفت کے بعد دہشت گردوں نے آسانی سے گلگت کا رخ کرلیا ہے جو کہ انتہائی خطرناک ہے، عوامی حلقوں کی جانب سے مطالبہ کیا جارہا ہے کہ حکومت شاہراہ قراقرم کو محفوظ بنانے کیلئے ایمرجنسی نافذ کریں کیونکہ دہشت گردی کے مسلسل وارداتوں کے بعد ایسا لگتا ہے کہ اب شاہراہ قراقرم بھی سفر کیلئے غیر محفوظ ہوگیا ہے۔

یاد رہے حکومت نے ہلاک ہونے والے دہشت گرد کی شناخت ابھی تک نہیں بتایا، لہذا حکومت کو چاہئے کہ دہشت گرد کا تعلق کہاں سے تھا عوام کو بتایا جائے

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

About admin

اپنی رائے کا اظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

*