تازہ ترین

آرڈر 2018 نے جی بی کو ملک کے دوسرے صوبوں کے برابر لا کھڑا کر دیا، اکبر تابان۔ آرڈر نہیں آئین چاہئے ۔ عوام

سکردو(موسی چلونکھا) پاکستان کے زیر انتظام گلگت بلتستان مسئلہ کشمیر کا حصہ ہونے کی وجہ سے پاکستان کے آئین میں شامل نہیں ہوسکتا ہے۔ پاکستان نے گلگت بلتستان کے عوام کو بااختیار بنانے کیلئے گذشتہ کئی دہائیوں سے مخلتف پیکچ دے کر عوام کو مطمئن کرنے کی کافی کوشش کر رہا ہے۔ پاکستان پیپلز پارٹی نے سنہ دوہزار نو میں صوبائی سیٹ اپ دیا اور پاکستان مسلم لیگ ن کی مرکزی حکومت نے قومی سلامتی کونسل سے 2018 آرڈینس منظور کرلیا ہے اور اور اج وزیر اعظم پاکستان شاہد خاقان عباسی نے گلگت کا دورہ کیا گیا اور گلگت بلتستان قانون ساز اسمبلی سے خطاب کرتے ہوئے 2018 آرڈنینس منظور کرلیا ہے اور وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی کے خطاب سے پہلے گلگت بلتستان اسمبلی میں جی بی آرڈینیس 2018 کے خلاف آپوزیشن ارکان کا وزیر اعظم کی موجودگی میں بھر پور احتجاج اور آرڈر کی کاپیاں پھاڑ دیا اور اسمبلی سے واک آؤٹ کیا اور پی ٹی آئی کے آپوزیشن رہنما راجہ جہانزیب اور ن لیگ کے ممبر قانون ساز اسمبلی میجر آمین کے درمیان ہاتھ پائی ہوا وزیر اعظم کے دورے مواقع پر پورے گلگت بلتستان کے تمام اضلاع میں مکمل شٹر ڈاؤن ہڑتال اور احتجاج کیا جارہا ہے گلگت بلتستان عوامی ایکشن کمیٹی کے جنرل سیکرٹری اغا علی رضوی نے کہا کہ ہمیں گلگت بلتستان کو مکمل آئینی صوبہ بنایا جائے اگر صوبہ بنانا ممکن نہیں ہے تو کشمیر طرز کا سیٹ اپ دیا جائے قوم پرست نوجوان رہنما الطاف شوٹو نے کہا کہ گلگت بلتستان کشمیر کا حصہ نہیں ہے مسلہ کشمیر کا حصے میں شامل کرچکا ہے اور اپ مسلہ کشمیر کی وجہ سے گلگت بلتستان پاکستان کا آئینی صوبہ بن نہیں سکتا ہے اور گلگت بلتستان کو متنازعہ علاقے کا حقوق دلایا جائے اور تاکہ گلگت بلتستان کے عوام کو بھی متنازعہ علاقے کی سہولیات مل سکے اور انسانی حقوق کی عالمی تنظیمیں گلگت بلتستان میں جو کالا قانون رائج کیا جارہا ہے اس کا فوری نوٹس لے گلگت بلتستان کے سینئر وزیر حاجی اکبر تابان نے کہا کہ گلگت بلتستان آڈر 2018 نے خطے کو ملک کے دوسرے صوبوں کے برابر لا کھڑا کر دیا ہے اور عوام کے امنگوں کے عین مطابق سیاسی، مالیاتی، انتظامی طور پر مضبوطی کی ضامن ہے اور گلگت بلتستان میں آج سے سنہرے دور کا آغاز شروع ہوا کیونکہ اختیارات کی اسلام آباد سے منتقلی عوام کا دیرینہ خواب تھا جو اج پورا ہوچکا ہے اور اج سے خطے میں ترقی کا نیا دور شروع ہوگا ۔گلگت بلتستان کی عوام کا ایک ہی مطالبہ ہے کہ اقوام متحدہ خاموش رہنے کے بجائے اپنا رول ادا کرتے ہوئے کشمیر میں راے شماری کرے تاکہ گلگت بلتستان اور کشمیر کے عوام کا پرانا مسلہ حل ہو

  •  
  • 10
  •  
  •  
  •  
  •  
    10
    Shares

About TNN-ISB

اپنی رائے کا اظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

*